ریٹائرمنٹ تو لی ہی نہیں تھی:آفریدی

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کسی اور کی کپتانی میں کرکٹ کھیلنے پر اعتراض نہیں: آفریدی

پاکستان کرکٹ بورڈ کے ساتھ تناؤ کی وجہ سے پانچ ماہ پہلے کرکٹ چھوڑنے کا اعلان کرنے والے شاہد آفریدی نے اب یہ کہا ہے کہ وہ ٹیم میں انتخاب کے لیے دستیاب ہیں۔

شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ انہوں نے کبھی ریٹائرمنٹ لی ہی نہیں تھی اور اب پاکستان کرکٹ بورڈ میں ہونے والے تبدیلیوں کے بعد دوبارہ سلیکشن کے لیے دستیاب ہیں۔

شاہد آفریدی نے صحافیوں کو بتایا ’میں پاکستان ٹیم کے لیے دوبارہ دستیاب رہوں گا۔ میں نے کبھی بھی کرکٹ سے ریٹائرمنٹ نہیں لی تھی صرف یہی کہا تھا کہ سابقہ کرکٹ انتظامیہ کی موجودگی میں پاکستان کے لیے نہیں كھیلوں گا‘۔

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور آل راؤنڈر شاہد آفریدی نے ایک روزہ کرکٹ ٹیم کی کپتانی واپس لیے جانے کے بعد بین الاقوامی کرکٹ کو خیرباد کہہ دیا تھا۔

پاکستانی ٹیم کے دورۂ ویسٹ انڈیز کے دوران ان کے کوچ وقار یونس سے مبینہ طور پر اختلافات ہو گئے تھے۔

مئی دو ہزار گیارہ میں شاہد آفریدی نے انٹرنیشنل کرکٹ سے علیحدگی کا اعلان کیا تھا اور کہا تھا کہ وہ پاکستانی کرکٹ بورڈ سے خوش نہیں ہیں۔

شاہد آفریدی نے کہا تھا، ’لوگوں نے مجھے کافی عزت اور پیار دیا ہے۔ میں اسے ایک ایسے بورڈ کے ساتھ برباد نہیں کرنا چاہتا جسے یہ پتہ ہی نہیں ہے کہ کھلاڑیوں کا احترام کیسے کیا جاتا ہے‘۔

انہوں نے پاکستانی کرکٹ بورڈ کے ارکان کو پاکستانی کرکٹ پر کلنک قرار دیا تھا۔

اب پانچ ماہ بعد بین الاقوامی کرکٹ میں واپسی کا اعلان کرتے ہوئے شاہد آفریدی نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ انہیں کسی اور کی کپتانی میں کرکٹ کھیلنے پر بھی کوئی اعتراض نہیں ہے۔

شاہد آفریدی کے اس تازہ اعلان پر پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے تاحال کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا ہے۔

اسی بارے میں