’رشوت کا معاملہ، دوبارہ تحقیقات ہوں گی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سیپ بلاٹر نے تین ٹاسک فورسز اور ایک گڈ گورننس کمیٹی بنانے کا بھی اعلان کیا

فٹبال کی عالمی فیڈریشن فیفا نےاپنے ایک سابق مارکیٹنگ شراکت دار کے معاملے کی دوبارہ جانچ کے لیے کمیٹی تشکیل دے دی ہے۔

اس معاملے میں سامنے آنے والی دستاویزات کے مطابق نوے کی دہائی میں تنظیم کے عہدیداران نے ورلڈ کپ کے ٹی وی اور سپانسر شپ حقوق دینے کے عوض کمیشن لیا تھا۔

فیفا کے صدر سپ بلاٹر کا کہنا ہے کہ ’یہ معاملہ ملکی ایسوسی ایشنز اور ارکان کی جانب سے اٹھایا گیا ہے اور ایگزیکٹو کمیٹی کا فیصلہ ہے کہ اس معاملے کی تحقیقات ہونی چاہیئیں‘۔

بلاٹر کا کہنا تھا کہ ایگزیکٹو کمیٹی دسمبر میں ہونے والے اجلاس میں کمپنی سے متعلقہ دستاویزات کا جائزہ لےگی۔فیفا نے کئی بار صحافیوں کی جانب سے یہ دستاویزات افشا کروانے کی کوششیں ناکام بنائی ہیں۔

گزشتہ برس فیفا اور اس کے اعلٰی حکام کے وکلاء نے اس مقدمے کو نمٹانے اور اپنی شناخت خفیہ رکھنے کے لیے ساڑھے پانچ ملین سوئس فرانک ادا کیے تھے۔

سیپ بلاٹر نے تین ٹاسک فورسز اور ایک گڈ گورننس کمیٹی بنانے کا بھی اعلان کیا جو کہ تنظیم میں اصلاحات کے عمل پر نظر رکھیں گی۔

انہوں نے ان اصلاحات کے نفاذ کے لیے دو سال کا نظامِ الاوقات بھی پیش کیا ہے۔

اسی بارے میں