پاکستان کی پہلی خاتون فٹبال کوچ

کرن الیاس تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کرن دو بار پاکستان کی خواتین ٹیم کی اسسٹنٹ کوچ رہ چکی ہیں

کرن الیاس ایشین فٹبال کنفیڈریشن کا’بی‘ لیول کوچنگ کورس مکمل کر کے پاکستان کی پہلی کوالیفائیڈ خاتون فٹبال کوچ کہلائے جانے پر خوش ہیں۔

کرن الیاس نے گزشتہ دنوں کوالالمپور میں ہونے والے کورس میں شرکت کی جہاں شریک چوبیس میں سے نو خواتین کوچ کامیاب ہوئیں ان میں کرن الیاس واحد پاکستانی تھیں۔

کرن الیاس نے بی بی سی کو دیئے گئے انٹرویو میں کہا کہ اس کورس میں ان سے کہیں زیادہ تجربہ کار کوچ موجود تھیں ان میں چین کی ایک سابق کھلاڑی بھی شریک تھیں جنہوں نے تین ورلڈ کپ مقابلوں میں اپنے ملک کی نمائندگی کی ہے۔

ان کے علاوہ کوچنگ میں دس سے پندرہ سال کا وسیع تجربہ رکھنے والی کوچز بھی تھیں اور ان کے ساتھ کامیابی حاصل کرنا ان کے لیے کسی اعزاز سے کم نہیں۔

کرن الیاس گزشتہ سال سری لنکا میں اے ایف سی کا’ سی‘ لیول کورس مکمل کرنے والی دو پاکستانی کوچز میں شامل تھیں جب انہوں نے ایک ایرانی کوچ کی اسسٹنٹ کے طور پر کام کیا تھا۔

کرن کا کہنا ہے کہ وہ بی لیول کورس مکمل کرنے کے بعد اے لیول کورس کے لیے جلدبازی نہیں کرنا چاہتیں بلکہ انہوں نے جو کچھ سیکھا ہے اسے عملی طور پر کرنا چاہتی ہیں۔

وہ خواتین فٹبال کو نچلی سطح پر فروغ دینے کے لیےاپنا کردار ادا کرنا چاہتی ہیں۔جب انہیں تجربہ حاصل ہوجائے گا اس کے بعد ہی وہ اے لیول کورس کرنے کے بارے میں سوچیں گی۔

کرن کا کہنا ہے کہ وہ دو بار پاکستان کی خواتین ٹیم کی اسسٹنٹ کوچ رہ چکی ہیں اس کے علاوہ مختلف اداروں اور کلبوں کی بھی کوچ رہ چکی ہیں لیکن وہ یہ سمجھتی ہیں کہ انہیں ابھی بھی بہت کچھ سیکھنا ہے۔

کرن پر عزم ہیں کہ پاکستان کی خواتین فٹبال بھی بہت جلد اہم مقام بنائے گی کیونکہ کھلاڑیوں اور کوچز کو سہولتیں بھی میسر ہیں اور کھیلنے کے مواقع بھی ہیں صرف تجربہ درکار ہے جو وقت کے ساتھ ملے گا اور اس کے بعد ان کی صلاحیتوں میں نمایاں بہتری آئے گی۔

اسی بارے میں