’انگلینڈ کی ٹیم کی کارکردگی شاندار‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اب ہم آگے کی جانب دیکھ رہے ہیں: کُک

انگلینڈ کی ایک روزہ کرکٹ ٹیم کے کپتان الیسٹر کُک نے اپنی ٹیم کی پاکستان کے خلاف کارکردگی کو ’شاندار‘ قرار دیا اور کہا کہ ان کی ٹیم ٹی ٹوئنٹی کے میچوں میں بھی مقابلہ کرنے کے لیے تیار ہے۔

دبئی میں انگلینڈ نے پاکستان کو ایک روزہ چار میچوں کی سیریز میں چار صفر سے شکست دی ہے۔

کُک نے کہا ’یہ ایک شاندار کارکردگی تھی۔ ہم نے سپننگ وکٹ پر چار سپنروں کے دباؤ کا سامنا کیا۔ میں ٹی ٹوئنٹی میچوں کے لیے بھی تیار ہوں۔ تاہم چند ایک بلے باز معمولی زخمی ہوئے ہیں جن میں تشویش کی بات روی بھوپارا کا زخمی ہونا ہے۔‘

کک نے کہا ’جو لڑکے اس ٹیم میں شامل کیے گئے انہوں نے اپنی شمولیت کو برقرار رکھنے کے لیے جان کی بازی لگا دی۔ اب ہم آگے کی جانب دیکھ رہے ہیں۔‘

انہوں نے کہا کہ ٹِم اور جیڈ کی واپسی ٹیم میں خوشگوار تبدیلی تھی۔ سینیئر بولروں کے بغیر پاکستان کو دو سو تیس تک محدودرکھنا یقیناً ایک اچھی کوشش تھی۔

ان کے بقول پاکستان کو دو سو سینتیس رنز پر آؤٹ کرنے اور انگلینڈ کے اڑسٹھ پر چار کھلاڑی آؤٹ ہونے کے بعد کیوِن (ایک سو تیس رنز) اور کریگ (تینتالیس رنز) کا شکریہ کہ انہوں نے مشترکہ طور پر ایک سو نو قیمتی رنز کا اضافہ کیا۔

انہوں نے کہا ’کریگ دباؤ میں کیا کرسکتے ہیں یہ ثابت کرنے کے لیے ان کے پاس پہلا موقع تھا اور وہ بہت اچھا کھیلے اور ظاہر ہے کیوِن کی جانب سے یہ زبردست کھیل تھا۔‘

کیوِن پیٹرسن کا کہنا تھا ’ایک روزہ میچووں میں اب تک میری جانب سے یہ بہترین کارکردگی تھی۔ پرسکون انداز میں ہدف تک پہنچنا پریشان ہوئے بغیر، مجھے مزہ آیا۔‘

کیوِن نے مزید کہا ’میں ہمیشہ کہتا ہوں کہ جب میں اچھا نہیں کھیلتا تو مجھ پر تنقید کی جاتی ہے اور یہ ہی دستور بھی ہے لیکن میں نہ ہی سخت محنت سے کتراؤں گا اور نہ ہی کوشش ترک کروں گا۔ میں صرف کرکٹ کا مزہ لینا چاہتا ہوں۔‘

اسی بارے میں