دانش کنیریا کے خلاف انکوائری کا فیصلہ

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

انگلینڈ اور ویلز کرکٹ بورڈ نے پاکستانی سپنر کنیریا کے خلاف سپاٹ فکسنگ کے الزامات کی انکوائری کا فیصلہ کیا ہے۔

انگلش کرکٹ بورڈ نے دانش کنریا اور ایسکس کاونٹی کے فاسٹ بولر ویسٹ فیلڈ کو انضباطی کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کا کہا ہے۔ ان پر الزام ہے انہوں نے دو ہزار نو میں ایک کاونٹی میچ کے دوران بورڈ کے انسداد رشوت ستانی سے متعلق حکم نامے کی خلاف ورزی کی تھی۔

دانش کنیریا پر بھی الزام

ویسٹ فیلڈ نے کاونٹی میچ میں سپاٹ فکسنگ کا الزام قبول کر لیا تھا اور اس وقت جیل کاٹ رہے ہیں۔

انگلش کرکٹ بورڈ نے کوئین کونسل جیراڈ ایلیس کو انضباطی کمیٹی کا سربراہ مقرر کیا ہے جو مئی کے پہلے ہفتے میں اپنا کام شروع کرے گا۔

ویسٹ فیلڈ بھی اس وقت اپنے حصے کی قید کاٹ کر جیل سے رہا ہو چکے ہوں گے۔ امید کی جا رہی ہے کہ ایسکس کاونٹی کے کئی دیگر کھلاڑی بھی انضباطی کمیٹی کے سامنے پیش ہو کر دانش کنیریا کی سرگرمیوں کے حوالے سے پینل کو آگاہ کریں گے۔

دانش کنیریا کو دو ہزار نو میں ایک کاونٹی میچ میں سپاٹ فکسنگ کے الزام میں گرفتار کیاگیا تھا لیکن پولیس نے ناکافی ثبوت ہونے کی بنا کر انہیں رہا کر دیا گیا تھا۔

گزشتہ ماہ فاسٹ بولر ویسٹ فیلڈ نے عدالت کو بتایا تھا کہ انہیں سپاٹ فکسنگ کے دھندے میں ملوث کرنےمیں دانش کنیریا کا اہم کردار ہے اور اسی نے جواریوں سے رابطے کروائے تھے۔

دانش کنیریا اپنے اوپر الزامات کی تردید کرتے رہے ہیں لیکن پاکستان کرکٹ بورڈ نے اسے ٹیم میں شامل کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ دانش کنیریا پاکستان میں فرسٹ کرکٹ کھیل رہے ہیں۔

دانش کنیریا کو انکوئری کے سامنے پیش ہونے کے لیے انگلینڈ آنا پڑے گا جہاں پاکستان کے دو کھلاڑی سلمان بٹ اور محمد آصف سپاٹ فکسنگ کے جرم میں جیل کاٹ رہے ہیں۔

نوجوان فاسٹ بولر محمد عامر اپنے حصے کی سزا بھگت کر پاکستان واپس پہنچ چکے ہیں اور سابق کپتان سلمان بٹ پر الزامات کی بھونچاڑ کر رکھی ہے کہ انہیں سپاٹ فکسنگ کے چکر میں پھنسانے والے سلمان تھے۔

اسی بارے میں