’سیمی فائنل تک پہنچنا بھی بڑی کامیابی‘

بھارتی ہاکی ٹیم تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption بھارتی ہاکی ٹیم لندن اولمپک میں حصہ لینے کی پوری کوشش کرے گی

لندن اولمپک میں حصہ لینے سے پہلے بھارتی ہاکی ٹیم مشق کے طور پر کئی مقابلوں میں حصہ لے رہی ہے۔

ٹیم اس مہینے کے آخر میں اذلان شاہ ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کے لیے ملائیشیا جا رہی ہے لیکن گزشتہ ہفتے لندن میں ہونے والے چار ملکی مقابلے مین ٹیم کی کاردگی کافی مایوس کن رہی ہے ۔

گزشتہ ہفتے بھارتی ٹیم نے چار ملکی مقابلے میں ’بلیو ٹرف‘ پر بین اقوامی سطح پر اپنی پہلی مشق کی۔ ٹیم کے کوچ اور سلکٹرز ان میچوں سے کافی امید کر رہے تھے لیکن بھارت آسٹریلیا ، جرمنی اور انگلینڈ تینوں سے ہی ہار گیا۔

بھارت میں ہاکی سے سے وابستہ اہلکار اور ہاکی کی تجزیہ کار انوپم گولاٹی کا خیال ہے کہ چونکہ بھارتی ٹیم کی بلیو ٹرف پر پریکٹس نہیں ہے اس لحاظ سے یہ شکست بھارت کے لیے مایوس کن نہیں سمجھی جانی چاہیے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’ بھارت میں ابھی تک کوئی بلیو ٹرف نہیں تھی اور ابھی لدھیانہ میں لگی ہے ۔ اس سے انڈین ٹیم کو فائدہ پہنچے گا ۔ وہاں ٹیم کے لیے کیمپ لگانے پر غور کیا جا رہا ہے‘۔

بھارت کی ہاکی ٹیم نے کافی عرصے تک خراب کارکردگی کے بعد اولمپک کولیفائنگ میچوں میں بہت اچھا پرفارمنس دیا تھا اور یہ امید کی جار ہی تھی کہ وہ گشتہ ہفتے ہونے والے میچوں میں بھی کچھ ایسا ہی کر دکھائے گی۔

ملک کے سابق نامور کھلاڑی اور سابق کیپٹن ظفر اقبال کا کہنا ہے کہ برطانیہ، جرمنی اور آسٹریلیا جیسی نامور ٹیموں کا موازنہ کوالیفائنگ ٹیموں سے کرنا بالکل غلط ہے۔ ’دونوں میں بہت فرق ہے ۔ آسٹریلیا دنیا کی اول ٹیم ہے اور جرمنی و برطانیہ بھی اولین ٹیموں میں سے ہیں‘۔

حالیہ شکست کے باوجود بھارتی ٹیم کے جوصلے بلند ہیں اور وہ اولمپکس سے پہلے زبردست تیاریاں کر رہی ہے۔

انوپم گولاٹی کہتے ہیں ’بھارتی ٹیم مئی کے اواخر میں ملائیشیا میں اذلان شاہ ٹورنامنٹ میں حصہ لے گی۔ جون کے اوائل میں وہ فرانس میں دو میچز کھیلے گی اور اس کے بعد وہ لندن کے موسم سے ہم آہنگ ہونے کے لیے دو ہفتے سپین میں پریکٹس میچ کھیلے گی جس سے ٹیم کو کافی فائدہ پہنچنے کی امید ہے‘۔

لیکن سابق اولمپین ظفر اقبال کہتے ہیں کہ اولمپک میں ٹیم سے کسی طرح کی بڑی امید نہیں کی جانی چاہیئے ۔’ہم آٹھ مرتبہ گولڈ مڈل جیت چکے ہیں ۔ لیکن اب ہم اس حالت میں نہیں ہیں کہ اولمپک میں جاکر کوئی میڈل جیت سکیں ۔ ہاں یہ ضرورہ ہے کہ ہم دسویں مقام سے چھ پر آجائیں ۔ ہماری سب سے بڑی کامیابی یہ ہوگی کہ ہم سیمی فائنل تک پہنچ جائیں‘۔

فی الحال بھارتی ٹیم اذلان شاہ ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کے لیے تیاریان کر رہی ہے ۔ سات ملکی اس ٹورنامنٹ میں چھ ٹیمیں وہ ہیں جو جولائی میں اولمپکس میں کھیلنے والی ہیں اور بھارتی ٹیم کے لیے یہ اپنی طاقت کا اندازہ لگانے کا بہترین موقع ہوگا ۔

اسی بارے میں