ٹی20:’مقبول بنانا ہے تو تبدیلی ضروری‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اگر انگلینڈ ایسا کر لیتا ہے تو یہ چند بہترین اقدامات میں سے ایک ہوگا:مرلی دھرن

سری لنکا سے تعلق رکھنے والے تجربہ کار آف سپنر مرلی دھرن کا کہنا ہے کہ انگلینڈ میں مقامی ٹی ٹوئنٹی مقابلوں کی طرز میں تبدیلی کی ضرورت ہے تاکہ انہیں بھی بقیہ دنیا میں ہونے والے مقابلوں جیسی اہمیت ملے۔

چالیس سالہ مرلی دھرن لگاتار دوسرے سال انگلش کاؤنٹی گلوسٹرشائر کی جانب سے ٹی ٹوئنٹی مقابلوں میں شریک ہو رہے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ اگر انگلش لیگ انڈین پریمیئر لیگ کی طرز پر’فرنچائز فارمیٹ‘ اپنا لے تو یہ اس کے لیے فائدہ مند ہوگا۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے مرلی نے کہا کہ ’انہیں ایک بڑی تبدیلی کی ضرورت ہے‘۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ ٹی ٹوئنٹی کرکٹ کی مقامی لیگ انگلینڈ نے ہی متعارف کروائی تھی لیکن اب وہ پرانی ہو چکی ہے۔

سری لنکن سپنر کا کہنا تھا کہ ’انہیں فرنچائزڈ ٹیمیں بنانے کی ضرورت ہے اور یہ مالی طور پر کاؤنٹیوں کے لیے بھی فائدہ مند ہوگا۔ اگر ایسا ہوتا ہے تو یہ انگلینڈ کے لیے بہت بڑی چیز ہوگی۔ میرے خیال میں یہاں اس کی مارکیٹ ہے اور ٹی وی کے حقوق بھی آئیں گے‘۔

مرلی دھرن نے کہا کہ ’اگر انگلینڈ ایسا کر لیتا ہے تو یہ چند بہترین اقدامات میں سے ایک ہوگا اور مجھے یقین ہے کہ یہ اس مقابلے کو اس سے کہیں زیادہ کامیاب بنا دے گا جتنا یہ اب ہے‘۔

خیال رہے کہ اس وقت دنیا میں کرکٹ کھیلنے والے دس ممالک میں مقامی ٹی ٹوئنٹی لیگ کھیلی جا رہی ہے جن میں مقامی اور غیر ملکی کھلاڑی شرکت کرتے ہیں۔

اسی بارے میں