راجر فیڈرر نے ساتویں مرتبہ ومبلڈن جیت لیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption راجر فیڈرر آٹھویں مرتبہ ومبلڈن مقابلوں کے فائنل میں پہنچے تھے

سوئٹزرلینڈ کے راجر فیڈرر نے برطانیہ کے اینڈی مرے کو شکست دے کر ساتویں مرتبہ ومبلڈن ٹینس چیمپیئن شپ جیت لی ہے۔

یہ ان کے کیریئر کا سترہواں گرینڈ سلام اعزاز ہے اور اس فتح کے نتیجے میں فیڈرر ٹینس کی درجہ بندی میں دوبارہ پہلے نمبر پر بھی آ گئے ہیں۔

ومبلڈن میں راجر فیڈرر کی فتح: تصاویر

یہ ومبلڈن کی تاریخ میں آٹھواں موقع تھا کہ فیڈرر ان مقابلوں کے فائنل تک پہنچے تھے اور انہوں نے ان آٹھ میں سے سات مرتبہ فائنل جیت کر امریکہ کے پیٹ سمپراس کا ریکارڈ برابر کیا ہے۔

لندن میں اتوار کو کھیلے گئے فائنل میں اینڈی مرے نے پہلا سیٹ چھ چار سے جیت لیا تھا اور میچ کے ابتدائی مراحل میں فیڈرر نے بہت سی غلطیاں کیں۔

تاہم دوسرے سیٹ میں سوئس کھلاڑی نے مرے کی سروس بریک کرتے ہوئے سات پانچ سے کامیابی حاصل کی۔ فیڈرر نے تیسرا سیٹ چھ تین کے سکور سے جیتا اور چوتھے اور فیصلہ کن سیٹ میں چھ چار سے کامیابی حاصل کر کے اعزاز جیت لیا۔

برطانوی عوام کو اس فائنل میچ کا شدت سے انتظار تھا کیونکہ اینڈی مرے انیس سو اڑتیس کے بعد پہلے برطانوی کھلاڑی ہیں جو ومبلڈن کے فائنل میں پہنچے جبکہ آخری برطانوی کھلاڑی جو ومبلڈن جیتنے میں کامیاب ہوا تھا، فریڈ پیری تھے جنہوں نے انیس سو چھتیس میں یہ اعزاز جیتا تھا۔

یہ فائنل میچ دیکھنے کے لیے کئی اہم شخصیات ومبلڈن کے سینٹر کورٹ میں موجود تھیں جن میں برطانوی شہزادی کیتھرین میڈلٹن، وزیرِاعظم ڈیوڈ کیمرون بھی شامل تھے۔

میچ سے پہلے اینڈی مرے نے ایک بیان میں کہا تھا کہ’راجر فیڈرر کو شکست دینا ایک بڑا چیلنج ہے اور انہیں اتوار کو بہت مدد کی ضرورت ہو گی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ’مجھے امید ہے کہ تمام شائقین ان کے ساتھ ہونگے اور مجھے بڑی خوشی ہے کہ ٹورنامنٹ کے آخری میچوں کے مشکلات لحمات میں انہوں نے میرا ساتھ دیا۔‘

اسی بارے میں