احمدآباد ٹیسٹ میں بھارت کی فتح

آخری وقت اشاعت:  پير 19 نومبر 2012 ,‭ 07:24 GMT 12:24 PST

پرگیان اوجھا نے میچ میں نو وکٹیں حاصل کیں

بھارت نے احمد آباد میں کھیلے گئے پہلے کرکٹ ٹیسٹ میچ میں انگلینڈ کو نو وکٹوں سے شکست دے کر سیریز میں ایک صفر کی برتری حاصل کر لی ہے۔

میچ کے آخری دن انگلینڈ نے بھارت کو فتح کے ستتر رنز کا ہدف فراہم کیا جو اس نے باآسانی حاصل کر لیا۔

بھارت کے آؤٹ ہونے والے واحد بلے باز وریندر سہواگ تھے جو پچیس رنز بنا کر گریم سوان کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوئے۔

کلِک تفصیلی سکور کارڈ

پجارا اکتالیس جبکہ کوہلی چودہ رنز پر ناٹ آؤٹ رہے۔ بچارا کو پہلی اننگز میں ڈبل سنچری بنانے پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

اس سے قبل پانچویں دن کھیل کے آغاز پر الیسٹر کک اور میتھیو پرائر نے اننگز دوبارہ شروع کی تو دونوں سکور میں مزید سولہ رنز کا اضافہ ہی کر سکے۔

اس موقع پر پرگیان اوجھا نے میٹ پرائر کو اکیانوے کے انفرادی سکور پر اپنی ہی گیند پر کیچ کر لیا۔

مجموعی سکور میں نو رنز کے اضافے کے بعد کپتان کک بھی اوجھا کی گیند پر بولڈ ہوگئے۔ انہوں نے ایک سو چھہتر رنز بنائے۔ کک اور پرائر کے درمیان چھٹی وکٹ کے لیے ایک سو ستاون رنز کی شراکت ہوئی۔

سٹورٹ براڈ کو امیش یادو نے آؤٹ کیا، وہ تین رنز بنا سکے۔ گریم سوان نے سترہ رنز بنائے۔ انہیں ایشون نے بولڈ کیا۔

الیسٹر کک نے ایک سو چھہتر رنز کی اننگز کھیلی

بریسنن آؤٹ ہونے والے آخری انگلش کھلاڑی تھے جو بیس رنز کی اننگز کھیل کر ظہیر خان کی گیند پر کیچ ہوئے۔

بھارت کی جانب سے پرگیان اوجھا ایک مرتبہ پھر سب سے کامیاب بولر رہے۔ انہوں نے ایک سو بیس رنز کے عوض چار وکٹیں حاصل کیں۔ اوجھا نے مجموعی طور پر اس میچ میں نو وکٹیں لی ہیں۔

اس میچ میں بھارت نے اپنی پہلی اننگز آٹھ وکٹوں کے نقصان پر پانچ سو اکیس رنز بنا کر ڈیکلئیر کر دی تھی۔ اس اننگز کی خاص بات چیتیشور پجارا کی ناقابلِ شکست ڈبل سنچری اور وریندر سہواگ کی طوفانی سنچری تھی۔

اس کے جواب میں انگلش بلے باز بھارتی سپنرز کا مقابلہ کرنے میں بری طرح ناکام رہے اور پوری ٹیم صرف 191 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی تھی۔

انگلینڈ کی ٹیم اپنے اس دورے کے دوران بھارت کے خلاف چار ٹیسٹ میچ اور دو ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچ کھیلے گی۔ خیال رہے کہ انگلش ٹیم نے اٹھائیس برس قبل بھارت میں کوئی ٹیسٹ سیریز جیتی تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔