ممبئی ٹیسٹ میں پجارا کی سنچری

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 23 نومبر 2012 ,‭ 12:18 GMT 17:18 PST
پجارا

چیتیشور پجارا نے پہلے ٹیسٹ میں ڈبل سنچری سکور کی تھی۔

ممبئی میں انگلینڈ کے خلاف جاری دوسرے ٹیسٹ میچ کے پہلے دن کھیل کے اختتام پر بھارت نے چھ وکٹ کے نقصان پر دو سو چھیاسٹھ رنز بنا لیے ہیں۔

بھارت کی جانب سے اس میچ کی خاص بات چیتیشور پجارا کی سنچری رہی جو ایک سو چودہ رنز پر کھیل رہے ہیں۔ اس سے قبل پہلے ٹیسٹ میں بھی انھوں نے سنچری سکور کی تھی۔ ان کے ساتھ بھارت کے سپنر رام چندر اشون ہیں جنھوں نے ساٹھ رنز بنائے ہیں۔

یہ میچ بھارت کے سلامی بلے باز وریندر سہواگ کا سوواں میچ ہے اور اس میں ان سے لوگ ایک اچھی اننگز کی امید کر رہے تھے لیکن وہ چار چوکوں کی مدد سے تیس رنز بناکر مونٹی پنیسر کی گیند پر آؤٹ ہو گئے۔

بھارت نے ٹاس جیت کر پہلے بلے بازی کا فیصلہ کیا لیکن اس کی شروعات اچھی نہیں رہی کیونکہ اوپنر بلے باز گوتم گمبھیر صرف چار رنز بناکر پہلے ہی اوور میں اینڈرسن کی گیند پر آوٹ ہو گئے۔ اس کے بعد باون کے سکور پر ویرندر سہواگ بھی آوٹ ہو گئے۔

جب بھارت کا مجموعی سکور ساٹھ رنز تھا تو بھارت کے مایہ ناز بلے باز سچن تندولکر صرف آٹھ رنز بناکر آوٹ ہو گئے۔ انھیں بھی پنیسر نے آؤٹ کیا۔

ویراٹ کوہلی نے انیس رنز بنائے اور پنیسر کا شکار بنے جبکہ یوراج سنگھ کو گریم سوان نے صفر پر آؤٹ کر دیا۔

کپتان مہندر سنگھ دھونی نے پجارا کے ساتھ بھارت کی اننگز کو سنبھالنے کی کوشش کی اور پچاس رنز کی شراکت داری کی۔ وہ انتیس رنز بناکر پنیسر کی گیند پر سوان کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئے۔

اس کے بعد اشون نے پجارا کے ساتھ مل کر ستانوے رنز کی قابل قدر شراکت داری کی جو ابھی تک جاری ہے۔

پہلے دن کے اختتام پر دونوں ٹیمیں برابری پر نظر آ رہی ہیں۔ اگر بھارت نے دو سو چھیاسٹھ رنز بنا لیے ہیں تو انگلینڈ نے چھ وکٹ لے لیے ہیں۔ اگر پجارا نے سنچری بنائی ہے تو پنیسر نے بھی چار اہم وکٹیں لی ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔