ملینیم سٹیڈیم میں یا ٹویکنہیم سٹیڈیم؟

آخری وقت اشاعت:  منگل 4 دسمبر 2012 ,‭ 17:06 GMT 22:06 PST

دو ہزار پندرہ کے رگبی ورلڈ کپ کے لیے منتخب کیے گئے کھیل کے میدانوں میں کارڈف کا یہ میلینیم سٹیڈیم بھی ہے۔

رگبی ورلڈ یونین نے ویلز کی اس درخواست کو مسترد کر دیا ہے کہ ان کا رگبی دو ہزار پندرہ کے عالمی کپ کے لیے اینگلینڈ سے ہونے والا میچ کارڈف شہر کے ملینیم سلٹیڈیم میں منعقد ہو۔

انگیلنڈ جو ان مقابلوں کا میزبان ہے چاہتا ہے کہ یہ مقابلہ ٹویکنہیم سٹیڈیم میں ہو اور انہیں اپنے مقامی شائقین کی موجودگی کا فائدہ حاصل ہو۔

اس بارے میں حتمی فیصلہ ورلڈ کپ کی انتظامیہ مارچ میں کرے گی۔

آر ایف یو کے منتظم اعلیٰ ایئن رچی نے بی بی سی سپورٹ کو بتایا کہ ’ہم اس درخواست پر شکر گزار ہیں اور کارڈف ایک بڑی اچھی جگہ ہے کھیلنے کے لیے لیکن ہمارا اپنا بھی تو ایک بہترین میدان ہے۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ ’کارڈف جانا اور جا کر کھیلنا بہت اچھا ہے لیکن یہ صرف آر ایف یو کا فیصلہ نہیں ہے بلکہ رگبی کپ کے بورڈ نے بھی اس پر غور کیا ہے اور سب کا صلاح مشورہ شامل کیا جائے گا۔‘

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہمارے اپنے میدان میں کھیل بہت بہتر ہو گا اور ہم ضرور یہیں کھیلنا چاہیں گے۔

اس عالمی کپ کے لیے سترہ مقامات منتخب کیے گئے ہیں جن میں سے ایک کارڈف کا ملینئیم سٹیڈیم بھی ہے۔

سوموار کو اینگلینڈ کا نام قرعہ کے زریعے آسٹریلیا اور ویلز کے ساتھ ایک ہی پول میں نکلا۔

ویلز کی ٹیم کی انتظامیہ آسٹریلیا کے ساتھ میچ بھی ملینیم سٹیڈیم میں کھیلنا چاہتی ہے۔

ویلز رگبی یونین کے منتظم روجر لیوس نے سوموار کو کہا تھا کہ ’اینگلینڈ کے لیے یہ ایک بہترین موقع ہو گا کہ وہ دنیا کے ایک بہترین رگبی کے میدان میں کھیلیں جس کا وہ ضرور فائدہ اٹھانا چاہیں گے‘۔

اب دیکھنا یہ ہے کہ رگبی کے عالمی کپ کی انتظامیہ مارچ میں اس بارے میں کیا فیصلہ کرتی ہے۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔