سات سال بعد پاکستان کی بھارت میں سیریز کی جیت

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 3 جنوری 2013 ,‭ 14:15 GMT 19:15 PST

واضح رہے کہ کولکتہ کے ایڈن گارڈنز میں پاکستان کبھی بھی بھارت سے ایک روزہ میچ میں نہیں ہارا

پاکستان نے کولکتہ میں دوسرے ایک روزہ کرکٹ میچ میں بھارت کو پچاسی رنز سے شکست دے کر تین میچوں کی سیریز جیت لی ہے۔

اس سے پہلے پاکستان نے سال دو ہزار پانچ میں بھارت کو چھ میچوں کی سیریز میں چار دو سے شکست دی تھی۔

جمعرات کو کولکتہ میں کھیلے جانے والے میچ میں پاکستان نے بھارت کو فتح کے لیے دو سو اکیاون رنز کا ہدف فراہم کیا اور جواب میں بھارت کی ٹیم 165 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی۔

کلِک میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پاکستان کے بلے باز ناصر جمشید ایک سو چھ رنز سکور کرنے پر مین آف دی میچ کے حق دار ٹھہرے۔

اس سے پہلے چنئی میں کھیلے جانے والے پہلے ایک روزہ میچ میں پاکستان نے بھارت کو چھ وکٹوں سے شکست دے کر سیریز میں ایک صفر کی برتری حاصل کی تھی۔

بھارت کی جانب سے کپتان دھونی 54 رنز بنا کر سب سے نمایاں بلے باز رہے۔

پاکستان کی جانب سے سعید اجمل اور جنید خان نے تین تین جبکہ عمر گل نے دو اور محمد حفیظ، شعیب ملک نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔

بھارت کی اننگز میں بیالیس رنز کے مجموعی سکور پر بھارت کو پہلا نقصان اس وقت اٹھانا پڑا جب گوتم گھمبیر گیارہ رنز بنا کر آؤٹ ہوئے، انہیں جنید خان نے بولڈ کیا۔

اس کے کچھ دیر بعد 55 کے مجموعی سکور پر ویرات کوہلی چھ رنز بنا کر جنید خان کی گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔

آؤٹ ہونے والے تیسرے بلے باز سہواگ تھے جنہیں عمر گل نے آؤٹ کیا۔ یوراج کی صورت میں چوتھی وکٹ گری۔

اس کے بعد رائنا اٹھارہ، ایشون تین اور جدیجا تیرہ رنز بنا کر آؤٹ ہوئے، جدیجا کی وکٹ کی سعید اجمل نے حاصل کی اور انہوں نے اس کے بعد آنے والے بلے باز کمار اور ڈائنڈا کو صفر پر آؤٹ کیا۔

بھارت کا اس موقع پر نو وکٹوں کے نقصان پر سکور132 رنز تھا تاہم بعد میں کپتان دھونی اور شرما کے درمیان تینتیس رنز کی شراکت داری ہوئی اور آخری آؤٹ ہونے والے کھلاڑی شرما تھے، جنہوں نے دو رنز بنائے۔

اس میچ میں ایک عمدہ آغاز کے باوجود پاکستانی ٹیم پہلے کھیلتے ہوئے صرف دو سو پچاس رنز ہی بنا سکی اور انچاسویں اوور میں آل آؤٹ ہوگئی۔

بھارتی کپتان مہندر دھونی نے اس میچ میں ٹاس جیت کر پاکستان کو پہلے کھیلنے کی دعوت دی تو پاکستانی بلے بازوں نے جارحانہ انداز اپنایا۔

پاکستان کی جانب سے محمد حفیظ اور ناصر جمشید نے اننگز شروع کی اور شاندار بلے بازی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پہلی وکٹ کے لیے ایک سو اکتالیس رنز کی شراکت قائم کی۔

رویندر جدیجا نے تین وکٹیں حاصل کیں

اس دوران محمد حفیظ نے نصف سنچری بھی مکمل کی۔ یہ عالمی ایک روزہ کرکٹ میں محمد حفیظ کی چودہویں نصف سنچری تھی۔ وہ چھہتر کے انفرادی سکور پر بولڈ ہوئے۔

ناصر جمشید نے اس سیریز میں لگاتار دوسری سنچری مکمل کی اور ایک سو پانچ رنز بنا کر رویندر جدیجا کی گیند پر سٹمپ ہوئے۔ یہ ایک روزہ کرکٹ میں ان کی تیسری سنچری ہے اور انہوں نے اپنے کیریئر کی تینوں سنچریاں بھارت کے خلاف ہی بنائی ہیں۔

آنے والے دیگر بلے باز قابلِ ذکر اننگز کھیلنے میں ناکام رہے اور چھ پاکستانی بلے بازوں کا سکور دوہرے ہندسوں میں داخل نہ ہو سکا۔ پاکستان کی نو وکٹیں مجموعی سکور میں ایک سو نو رن کے اضافے کے بعد گریں۔

بھارت کی جانب سے رویندر جدیجا اور ایشانت شرما نے تین، تین وکٹیں حاصل کیں۔

اس میچ کے لیے پاکستان نے چنئی میں جیتنے والی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی جبکہ بھارتی ٹیم میں روہت شرما کی جگہ آل راؤنڈر رویندر جدیجا کو شامل کیا گیا۔

پاکستانی ٹیم پانچ سال کے طویل عرصے کے بعد بھارت کا دورہ کر رہی ہے اور اس ون ڈے سیریز سے قبل دونوں ٹیموں کے مابین دو میچوں کی ٹی ٹوئنٹی سیریز کھیلی گئی تھی جو ایک ایک سے برابر رہی تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔