کیون پیٹرسن کو سینٹرل کنٹریکٹ مل گیا

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 10 جنوری 2013 ,‭ 01:21 GMT 06:21 PST

بتیس سالہ کیون پیٹرسن اب تینوں طرز کی بین الاقوامی کرکٹ کھیل سکتے ہیں

بلے باز کیون پیٹرسن نے انگلینڈ کی کرکٹ ٹیم کے ساتھ کھیلنے کے مکمل سینٹرل کنٹریکٹ پر دستخط کر دیے ہیں۔

کیون پیٹرسن کو اس سے پہلے انگلینڈ کی ٹیم میں دورہ بھارت کے لیے شامل کیا گیا تھا لیکن بعد میں انہوں نے چار ماہ کے کنٹریکٹ کا معاہدہ کر لیا تھا۔

سینٹرل کنٹریکٹ حاصل کرنے کے بعد کیون پیٹرسن تینوں طرز کی عالمی کرکٹ میں حصہ لے سکتے ہیں جو کہ مئی سال دو ہزار بارہ میں ایک موقع پر ناممکن لگتا تھا۔

واضح رہے کہ گذشتہ سال مئی میں کیون پیٹرسن کو اشتعال انگیز پیغامات بھیجنے پر کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اینڈریو سٹراس سے معافی مانگنی پڑی تھی، انہوں نےجنوبی افریقہ کی ٹیم کے کھلاڑیوں کو اپنی ٹیم اور بالخصوص کپتان اینڈریو سٹراس کے بارے میں اشتعال انگیز ٹیکسٹ پیغامات بھیجے تھے اور اس کے بعد انہیں ٹیم سے نکال دیا تھا۔

تاہم بعد میں انگلش کرکٹ بورڈ نے قبول کیا تھا کہ پیغامات مذمتی نہیں تھے اور کیون پیٹرسن کو چار ماہ کا کنٹریکٹ دیا گیا تھا۔

کیون پیٹرسن نے بھارت کے دورے کے دوران عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا۔ انہوں نے ممبئی ٹیسٹ میچ میں ایک سو چھیاسی رنز جبکہ دو نصف سنچریاں بھی سکور کیں تھیں۔

اس سیریز میں انگلینڈ نے بھارت کو اٹھائیس برس کے طویل انتظار کے بعد بھارتی سرزمین پر ٹیسٹ سیریز میں دو ایک سے شکست دی تھی۔

گذشتہ ماہ انگلینڈ کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ اینڈی فلاورنے کہا تھا کہ کیون پیٹرسن کو نیا کنٹریکٹ دیا جائے گا۔

اینڈی فلاور کے مطابق کیون پیٹرسن کو کنٹریکٹ دیے جانے کے حوالے سے کوئی مسئلہ نہیں ہو گا، پیٹرسن نے ہر طرح سے بہترین طرِز عمل کا مظاہرہ کیا۔

کیون پیٹرسن ان دنوں بھارت کے خلاف ایک روزہ سیریز کی تیاریوں میں مصروف ہیں لیکن انگلینڈ کرکٹ بورڈ کی سینیئر کھلاڑیوں کو کھلانے کی پالیسی کے تحت ان کو مارچ میں نیوزی لینڈ کے خلاف تین ایک روزہ میچوں اور تین ٹی ٹوئنٹی میچوں کی سیریز میں آرام دیا جائے گا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔