ڈوپنگ سکینڈل، سپین میں عدالتی کارروائی

آخری وقت اشاعت:  پير 28 جنوری 2013 ,‭ 12:50 GMT 17:50 PST

سپین کے ایک ڈاکٹر کے خلاف کھیلوں کی دنیا کا سب سے بڑا ممنوعہ ادویات کا نیٹ ورک چلانے کے الزام میں عدالتی کارروائی شروع کی جا رہی ہے۔

سپین کے دارالحکومت میڈرڈ میں ڈاکٹر ایوفیمیانو فیونٹس کے خلاف عدالتی کارروائی تقریباً سات سال بعد شروع ہو رہی ہے جب پولیس نے ان کے دفاتر پر چھاپے مار کر دو سو بیگ قبضے میں لیے جن کا تعلق کئی نامور سائیکل سواروں سے ہے۔

درجنوں سائیکل سواروں کو عدالتی کارروائی میں گواہی دینے کے لیے طلب کیا گیا ہے۔

ڈاکٹر فیونٹس، ان کی بہن اور تین سابق سائیکلنگ کوچ ان میں شامل ہیں جن پر عوام کی صحت سے متعلق قوانین کو توڑنے کا الزام لگایا گیا ہے۔

ان کے خلاف ڈوپنگ یعنی کارکردگی بڑھانے والی ممنوعہ قوت بخش ادویات کے استعمال کے الزام کے تحت کارروائی نہیں کی جائے گی کیونکہ ان کی گرفتاری کے وقت سپین میں انسداد ڈوپنگ قوانین موجود نہیں تھے۔

استغاثہ کو ثابت کرنا ہو گا کہ مدعاعلیہ کے اقدامات نے کھلاڑیوں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈال دیا اور توقع ہے کہ مدعا علیہ اس کی تردید کریں گے۔

یہ عدالتی کارروائی ایک ایسے وقت میں شروع کی جا رہی ہے جب چند دن پہلے ہی سات بار ٹور ڈی فرانس سائیکل ریس جیتنے والے امریکی سائیکلسٹ لانس آرمسٹرونگ نے پہلی بار عوامی سطح پر اپنے سائیکلنگ کیرئیر میں ممنوعہ قوت بخش اودیات کے استعمال کا اعتراف کیا تھا۔

ہسپانوی پولیس نے اس کیس کی تحقیقات جسے آپریشن پیروٹو کا نام دیا گیا تھا، اس آپریشن کے دوران مئی سال دو ہزار چھ میں میڈرڈ، زاراگوزا، ایل ایسکوریل میں واقع دفاتر، لیبارٹریز، فلیٹس پر کئی چھاپے مارے۔

ان چھاپوں کے دوران پولیس نے منجمد خون یا پلازما کے دو سو بیگ برآمد کیے جن پر لیبل موجود تھے جن کے بارے میں خیال کیا جا رہا ہے کہ یہ ڈاکٹر فینونٹس کے گاہکوں کے خفیہ نام ہیں۔

اس سکینڈل میں مبینہ طور پر درجنوں سائیکل سوار ملوث ہیں اور ان میں ٹور ڈی فرانس کے فاتح البرٹو کونٹاڈور بھی شامل ہیں جن کے بارے میں توقع ہے کہ وہ عدالتی کارروائی کے دوران شواہد فراہم کریں گے۔

انسدادِ ممنوعہ ادویات کی ایجنسی ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے مطابق اسے چھاپوں کے دوران آگاہ کیا گیا تھا کہ برآمد کیے جانے والے خون کے بیگز کا تعلق کئی کھیلوں کے کھلاڑیوں سے ہے جس میں فٹبال اور ٹینس کے کھلاڑی بھی شامل ہیں۔

تاہم عدالتی کارروائی کی توجہ سائیکلٹس پر مرکوز رکھی جائے گی کیونکہ استغاثہ کے سربراہ کے مطابق سائیکلٹس ہی کو برآمد کیے جانے والے خون کے بیگز سے شناخت کیا جا سکتا ہے۔

توقع ہے کہ عدالتی کارروائی مارچ تک جاری رہے گی اور اس میں قصور وار پائے جانے والے افراد کو دو سال قید اور دو سال تک کھیل میں حصہ لینے پر پابندی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔