مارک ویبر، سبیسشن ویٹل کا تنازعہ ’حل‘

Image caption سبیسشن ویٹل نے ریڈ بُل کے اپنے ساتھی مارک ویبر کو اس وقت غصہ دلایا جب انہوں نے سیپنگ میں ہونے والی ریس کے آخر میں ٹیم کے حکم کو نظر انداز کرتے ہوئے اوور ٹیک کیا۔

فارمولا ون کار ریسنگ ٹیم ریڈ بُل کے سربراہ ہیلمٹ مارکو کا کہنا ہے سبیسشن ویٹل اور مارک ویبر کے درمیان پیدا ہونے والا تنازعہ ’حل کر لیا گیا‘ ہے۔

مارکو کے مطابق دونوں ڈرائیوروں نے ملیشین گراں پری کے بعد ہونے والی ایک گفتگو کے بعد مصاحفہ کیا ۔

تین بار عالمی چیمپئین رہنے والے سبیسشن ویٹل نے ریڈ بُل کے اپنے ساتھی مارک ویبر کو اس وقت غصہ دلایا جب انہوں نے سیپنگ میں ہونے والی ریس کے آخر میں ٹیم کے حکم کو نظر انداز کرتے ہوئے اوور ٹیک کیا۔

مارکو نے کہا کہ ’ویٹل اس صورتحال سے بہت پریشان تھے‘ اور کہا کہ ’میں سمجھتا ہوں کہ وہ ایسا دوبارہ نہیں کرے گا‘۔

مارکو نے مزید کہا کہ ’ریس کے بعد کی گفتگو میں اس ریس کے حوالے سے گفتگو کی گئی اور اس کے بعد دونوں ڈرائیوروں نے ہاتھ ملائے۔ جس کے نتیجے میں اس وقت معاملہ حل ہو گیا ہے۔‘

انہوں نے مزید کہا کہ ’لازمی نہیں کہ دونوں اب ہر بات پر متفق ہوں مگر مستقبل میں وہ ایک بہترین کام کرنے کی شراکت پر کام کریں گے‘۔

مارکو جو ریڈ بُل کے مالک ڈائٹریخ میٹشٹز کے دستِ راست ہیں اور جرمن ڈرائیور سبیسشن ویٹل کے بہت بڑے حامی سمجھے جاتے ہیں نے کہا کہ انہیں امید ہے کہ سبیسش نے اس سب سے ایک اہم سبق حاصل کیا ہو گا۔

Image caption سبیسشن ویٹل اور مارک ویبر کے درمیان اس سے پہلے بھی بہت دفعہ تنازعات سامنے آچکے ہیں اور ایک بار ترکش گراں پری میں ویٹل نے ویبر کی کار کو ٹکر بھی ماری تھی۔

مارکو نے یہ بھی کہا کہ ’سبیسشن نے پریس کانفرنس میں معذرت کی جو کہ سب سے پہلا درست قدم ہے‘۔

’انہیں اپنے آپ کو بہت زیادہ بدلنے کی ضرورت نہیں ہے مگر میں سمجھتا ہوں کہ وہ بہت پریشان تھے اور وہ خود اپنے رویے پر حیران تھے جیسے انہوں نے اس سارے معاملے میں کردار ادا کیا اور میں نہیں سمجھتا کہ وہ دوبارہ ایسا کریں گے۔‘

مارکو نے اصرار کیا کہ ان کی ٹیم اس سارے معاملے میں کچھ نہیں کر سکتی تھی جب سبیسشن نے ٹیم کی جانب سے احکامات کی حکم عدولی کرتے ہوئے ویبر کو اوور ٹیک کیا جبکہ انہیں ویبر کے پیچھے رہنے کو کہا گیا تھا۔

مارکو کے مطابق ’ہم نے سبیسشن کو کہا کہ وہ اپنی جگہ پر ہی رہے کیونکہ ہمیں نہیں علم تھا کہ دونوں کے ٹائروں کی کیا صورتحال ہے اور ہم چاہتے تھے کہ ہمارے دونوں ڈرائیوں اچھے طریقے پر ریس ختم کریں‘۔

’مگر اس کے بعد جو ہوا وہ ٹیم کی حکمتِ عملی پر ایک حملہ تھا اور صورتحال پھر قابو سے باہر ہو گئی اور آپ اس صوتحال کو ریڈیو پر تو کنٹرول نہیں کر سکتے تھے اور ریس کرنے والے سبیسشن آگے بڑھے اور سبقت لے گئے۔‘

ٹیم کے پرنسپل کرسچئین ہورنر نے اس بات کا انکشاف کیا کہ ویٹل نے پوری ریڈ بُل کی ٹیم کے سامنے اس ہفتے معافی مانگی۔

ہورنر کے مطابق ’انہوں نے کہا کہ وہ گزرا وقت واپس تو نہیں لا سکتے مگر تسلیم کیا کہ جو انہوں نے کیا وہ غلط تھا‘۔

اس ے بعد ویٹل نے ٹیم سے معذرت کی اور ہر ایک ٹیم کے رکن سے معافی مانگی کیونکہ انہوں نے کہا کہ ’وہ اس بات کو تسلیم کرتے ہیں کہ ٹیم بہت اہم ہے اور ٹیم کا حصہ ہونا کامیابی کا ایک اہم جزو ہے‘۔

اسی بارے میں