اولڈ ٹریفورڈ کے ’تحفظ‘ کی درخواست منظور

Image caption اولڈ ٹریفورڈ سٹیڈیم ثقافتی اثاثے کی حیثیت اختیار کر چکا ہے

برطانیہ کی ایک کونسل نے برطانوی فٹ بال کلب کے مداحوں کی تنظیم مانچسٹر یونائیٹڈ سپورٹرز ٹرسٹ کی درخواست منظور کر لی ہے جس میں کہا گیا تھا کہ اگر کبھی اولڈ ٹریفورڈ سٹیڈیم کو بیچنے کی کوشش کی جائے تو اس کا ’تحفظ‘ کیا جا سکے۔

یہ سٹیڈیم 1910 سے مانچسٹر یونائیٹڈ کا گڑھ ہے اور اسے مقامی اثاثہ قرار دیا گیا ہے۔

اس فیصلے کا مطلب یہ ہے کہ اگر کبھی مستقبل میں سٹیڈیم کا مالک گلیزر خاندان اسے بیچنے کی کوشش کرے تو ٹرسٹ کو بولی میں حصہ لینے کا اختیار حاصل ہو گا۔

کلب نے ٹریفورڈ کونسل سے کہا ہے کہ وہ اپنے فیصلے پر نظرِثانی کرے اور کہا ہے کہ اسے خدشہ ہے کہ قانون درست طریقے سے لاگو نہیں کیا گیا۔

یونائیٹڈ ٹرسٹ کی درخواست کے خلاف ہے۔ اس نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اس نے پہلے ہی اولڈ ٹریفورڈ سے اپنے وابستگی ظاہر کرنے کے لیے نو کروڑ پاؤنڈ کی سرمایہ کاری کر رکھی ہے:

’ظاہر ہے کہ اولڈ ٹریفورڈ ایک خاص جگہ ہے، یہ کلب کا دل اور روح ہے، تاہم ہمیں خدشہ ہے کہ قانون کا نفاذ درست طریقے سے نہیں ہوا، جس سے ملک بھر میں مثال قائم ہو سکتی ہے۔

’اس لیے ہم نے کونسل سے کہا ہے کہ وہ قانونی جائزے کے عمل کی پیروی کریں۔‘

ٹرسٹ کی چیف ایگزیکٹیو آفیسر ڈنکن ڈریسڈو نے کہا: ’اگرچہ ہم جانتے ہیں کہ مالکان کا فی الحال اولڈ ٹریفورڈ کو بیچنے کا کوئی ارادہ نہیں ہے، تاہم اس فیصلے سے شائقین کے طویل مدت مفاد کا تحفظ ہو گا کیوں کہ کسی کو نہیں معلوم کہ مستقبل میں کیا ہو گا۔‘

اسی بارے میں