آک لینڈ ٹیسٹ: بھارت کو مشکلات کا سامنا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بھارت کو نیوزی لینڈ کی برتری ختم کرنے کے لیے مزید 373 رنز کی ضرورت ہے اور پہلی اننگز میں اس کی چھ وکٹیں باقی ہیں

آک لینڈ میں کھیلے جانے والے پہلے ٹیسٹ میچ کے دوسرے دن کے اختتام پر بھارت نے نیوزی لینڈ کے خلاف پہلی اننگز میں چار وکٹوں کے نقصان پر 130 رنز بنا لیے۔

پہلے دن کھیل کے اختتام پر روہت شرما اور اجنکیا ریہانے کریز پر موجود تھے اور دونوں نے بالترتیب 67 اور 23 رنز بنائے تھے۔

بھارت کو نیوزی لینڈ کی برتری ختم کرنے کے لیے مزید 373 رنز کی ضرورت ہے اور پہلی اننگز میں اس کی چھ وکٹیں باقی ہیں۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

بھارت کی جانب سے شیکھر دھون اور مرلی وجے نے اننگز کا آغاز کیا۔ لیکن پہلے ہی اوور میں اس کی دو وکٹیں گر گئیں۔ اس کے بعد صرف 51 رنز کے مجموعی سکور پر اس کے چار کھلاڑی پویلین لوٹ گئے تھے، تاہم اس کے بعد شرما اور ریہانے کی شراکت نے ٹیم کو سہارا دیا ہے، تاہم اب بھی بھارت کو فالو آن سے بچنے کے لیے خاصی محنت کرنا ہو گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption نیوزی لینڈ کی جانب سے برینڈن مکلم نے 29 چوکوں اور پانچ چھکوں کی مدد سے 224 رنز بنائے

نیوزی لینڈ کی جانب سے ٹرینٹ بولٹ نے دو، ٹم ساؤدی اور نیل ویگنر نے ایک ایک کھلاڑی آؤٹ کیا۔

اس سے پہلے نیوزی کی ٹیم پہلی اننگز میں 503 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی تھی۔

نیوزی لینڈ کی جانب سے پیٹر فلٹن اور ہمیش ردرفورڈ نے اننگز کا آغاز کیا۔ بھارت کی طرح نیوزی لینڈ کا آغاز بھی اچھا نہ تھا اور ایک موقعے پر صرف 30 رنز کے مجموعی سکور پر اس کے تین کھلاڑی آؤٹ ہو گئے تھے۔

اس کے بعد برینڈن مکلم اور کین ولیمسن نے چوتھی وکٹ کے لیے 221 رنز کی اہم شراکت قائم کر کے اپنی ٹیم کو مشکل سے نکالا۔

نیوزی لینڈ کی اننگز کی خاص بات برینڈن میک کلم اور کین ولیم سن کی شاندار سنچریاں تھیں۔

نیوزی لینڈ کی جانب سے برینڈن میک کلم نے 29 چوکوں اور پانچ چھکوں کی مدد سے 224 جب کہ کین ولیم سن نے دس چوکوں اور دو چھکوں کی مدد سے 113 رنز بنائے۔

بھارت کی جانب سے ایشانت شرما نے چھ، ظہیر خان نے دو، محمد شامی اور جڈیجا نے ایک ایک کھلاڑی آؤٹ کیا۔

جمعرات کو شروع ہونے والے اس ٹیسٹ میں بھارت نے ٹاس جیت کر نیوزی لینڈ کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دی تھی۔

اسی بارے میں