ہے کوئی جو کوہلی کو روک سکے

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کوہلی نے ون ڈے انٹرنیشنل میں اپنی 19 سنچری سکور کی۔ ان کی 136 رنز کی شاندار اننگز میں دو چھکے اور 16 چوکے شامل تھے

دو کپتانوں کی ایک دوسرے کو زیر کرنے کی کوشش میں ویراٹ کوہلی کی سنچری مشفق الرحیم کی تین ہندسوں کی اننگز پر بازی لے گئی اور بھارت نے ایشیا کپ کی ابتدا چھ وکٹوں کی پراعتماد جیت سے کردی۔

بھارتی ٹیم کو نیوزی لینڈ میں اٹھائی گئی ہزیمت کے بعد اس آغاز کی اشد ضرورت بھی تھی۔

ویراٹ کوہلی نے مہندر سنگھ دھونی، یوراج سنگھ اور سریش رائنا کے نہ ہونے اور کپتانی کی اضافی ذمہ داری کے باوجود خود پر کسی قسم کا دباؤ محسوس نہیں کیا۔ وہ کافی عرصے سے بھارتی بیٹنگ کی سب سے بڑی امید ہیں اور نو ون ڈے میچوں میں آٹھویں جیت نے بحیثیت کپتان بھی ان کے کیس کو مضبوط کردیا ہے کیونکہ ای این چیپل جیسے تجزیہ نگار یہ کہہ چکے ہیں کہ کوہلی کپتانی کے لیے خود کو بالکل تیار کر چکے ہیں۔

کوہلی نے ون ڈے انٹرنیشنل میں اپنی 19 سنچری سکور کی۔ ان کی 136 رنز کی شاندار اننگز میں دو چھکے اور 16 چوکے شامل تھے۔

انھو ں نے اجنکیا راہانے کے ساتھ تیسری وکٹ کی میچ وننگ شراکت میں 213 رنز کا اضافہ کیا۔

راہانے نے نیوزی لینڈ کے دورے میں ناکامی کے بعد 73 رنز بناکر سکون کا سانس لیا لیکن شیکھر دھون اور روہیت شرما سے رنز ابھی بھی روٹھے ہوئے ہیں۔

یہ دونوں اوپنرز نصف سنچری شراکت کے فوراً بعد آؤٹ ہوئے جس کے بعد میزبان ٹیم تیسری کامیابی کے لیے ترستی رہی جو اسے 46 اوور میں اس وقت نصیب ہوئی جب بھارت کو جیت کے لیے صرف 13 رنز درکار تھے۔ پانچ رنز کے اضافے پر راہانے کی وکٹ بھی بنگلہ دیش کو ملی لیکن بہت دیر ہوچکی تھی۔

مشفق الرحیم جنہوں نے آٹھ بولرز آزمائے یقیناً شکیب الحسن کی کمی شدت سے محسوس کررہے ہوں گے جن کا براہ راست کوریج کے دوران دیکھا گیا ایک غیرمہذب اشارہ مہنگا پڑگیا اور اب وہ تین میچوں کی پابندی کا سامنا کر رہے ہیں۔

خود مشفق الرحیم بھی پچھلے چند دنوں سے شہ سرخیوں میں رہے ہیں۔

ایشیا کپ کی ٹیم کے انتخاب میں مشورہ نہ کیے جانے پر انھوں نے چیف سلیکٹر فاروق احمد پر سخت تنقید کی تھی اور اب انھوں نے اپنا غصہ بھارتی بولرز پر اتارا لیکن ون ڈے انٹرنیشنل میں ان کی دوسری سنچری رائیگاں گئی حالانکہ اسی اننگز نے بنگلہ دیش کو مشکل صورت حال سے نکال کر 279 تک پہنچنے میں اہم کردار ادا کیا۔

مشفق الرحیم اور انعام الحق نے تیسری وکٹ کی شراکت میں 133 رنز کا اضافہ کیا۔

ویراٹ کوہلی نے سات بولرز آزمائے جن میں محمد شامی 50 رنز کے عوض چار وکٹوں کے ساتھ کریئر کی بہترین بولنگ کرتے ہوئے ان کے اعتماد پر پورا اترے۔

ایشیا کپ کا تیسرا میچ جمعرات کو پاکستان اور پہلی بار اس ایونٹ میں شامل ہونے والی افغانستان کی ٹیم کے درمیان کھیلا جائے گا۔

دونوں ٹیمیں اس سے قبل سنہ 2012 میں شارجہ میں مدمقابل ہوئی تھیں اسی سال افغانستان نے آسٹریلیا کے خلاف بھی ایک ون ڈے کھیلا تھا لیکن یہی دو ون ڈے انٹرنیشنل میچز ہیں جو اس نےآئی سی سی کی ٹیسٹ رکنیت رکھنے والے ملکوں کے خلاف کھیل رکھے ہیں۔

اسی بارے میں