محمد علی کے باکسنگ مقابلے پر فکسنگ کا شبہ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption محمد علی کا شمار تاریخ کے بہترین کھلاڑیوں میں ہوتا ہے

دنیائے باکسنگ کے مشہور باکسر محمد علی کا سونی لسٹن کے خلاف پہلا عالمی ٹائٹل کے لیے ہونے والے میچ کے بارے میں شبہ ہے کہ وہ پہلے سے طے شدہ تھا۔

امریکہ کے وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف بی آئی) نے اس میچ کی تفتیش کی تھی۔

خیال رہے کہ سونی لسٹن کو اس میچ کو جیتنے کے لیے فیورٹ قرار دیا جا رہا تھا تاہم وہ محمد علی کے خلاف ساتویں راؤنڈ میں ریٹائر ہو گئے تھے۔

یہ مقابلہ جیتنے کے بعد محمد علی 22 برس کی عمر میں عالمی چیمپیئن بن گئے تھے۔

اس میچ کے 50 سال بعد ایف بی آئی کے ڈائریکٹر جان ایڈگر ہُوور کی سربراہی میں تحقیقاتی ٹیم کو شبہ ہے لاس ویگس کے جواری ایش ریسنک نے میامی میں ہونے والے اس مقابلے کو فکس کیا تھا۔

اس حوالے سے کی جانے والے تحقیق کسی حتمی ثبوت تک پہنچنے میں ناکام رہی تھی۔

خیال رہے کہ اولمپیک چیمپیئن محمد علی اس مقابلے سے پہلے مسلسل 19 مقابلوں میں ناقابلِ شکست رہے تھے۔

سونی لسٹن کی گذشتہ 37 مقابلوں میں یہ دوسری شکست تھی۔ اس مقابلے کے بعد لسٹن کا کہنا تھا کہ ان کے ہارنے کی وجہ ان کا زخمی کندھا تھا۔

امریکی اخبار واشنگٹن ٹائمز نے ایف بی آئی کے جو دستاویزات حاصل کیں انھیں اپنے دور میں اتنا احساس سمجھا گیا تھا کہ انھیں براہِ راست ایف بی آئی کے ڈائریکٹر جان ایڈگر ہوور کو بھیجا گیا تھا۔

24 مئی سنہ 1966 کی ایک دستاویز کے مطابق ہوسٹن کے ایک جواری بارنیٹ میگٹس کے ایک انٹرویو کا ذکر ہے جن کے خیال میں سونی لسٹن یہ مقابلہ جیت جائیں گے۔

تاہم انھوں نے اپنے جواری دوست ایش ریسنک کو مقابلے کے دن کہا کہ وہ سونی لسٹن کی جیت پر شرط نہ لگائیں۔

سنہ 1965 میں سونی لسٹن کے خلاف ہونے والے ایک اور مقابلہ بھی محمد علی نے جیت لیا اور اس کے بعد وہ تاریخ کے بہترین کھلاڑیوں میں سے ایک بن گئے۔

سونی لسٹن محمد علی سے ہارنے کے بعد دوبارہ کبھی بھی عالمی ٹائٹل نہ جیت سکے اور سنہ 1970 میں ان کا انتتقال ہو گیا۔

اسی بارے میں