ورلڈ ٹی 20: کیا انگلینڈ سری لنکا کو روک پائے گا؟

تصویر کے کاپی رائٹ Focus Bangla
Image caption ظہور احمد چوہدری سٹیڈیم چٹاگونگ میں رنوں کی بارش ہوگی یا پھر وکٹیں لڑھکیں گی

بنگلہ دیش میں جاری ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں جمعرات کو دو مقابلے ہو رہے ہیں جن میں پہلا مقابلہ جنوبی افریقہ اور ہالینڈ کی ٹیم کے درمیان ہے جبکہ دوسرا انگلینڈ اور سری لنکا کے درمیان ہے۔

کرکٹ مبصرین کا خیال ہے کہ جنوبی افریقی ٹیم ایک میچ جیت کر اس میچ میں اپنے رن اوسط کو بہتر کرنا چاہے گی اس لیے جارحانہ کھیل کی امید کی جا سکتی ہے۔

آج ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں دونوں میچ گروپ ایک کے ہیں اور یہ ظہور احمد چوہدری سٹیڈیم چٹاگونگ میں کھیلے جائیں گے۔

پہلا ميچ مقامی وقت کے مطابق ساڑے تین بجے شروع ہوگا جبکہ دوسرا میچ شام ساڑھے سات بجے۔

جنوبی افریقہ اپنا پہلا ميچ سری لنکا سے ہار گیا تھا جبکہ نیوزی لینڈ کے خلاف دوسرے میچ میں اسے جیت حاصل ہوئی تھی۔ دوسری جانب سری لنکا کے ہاتھوں ہالینڈ تیز گیندبازی کا مزہ چکھ چکی ہے۔

اس میچ میں امید ظاہر کی جارہی ہے کہ مورنی مورکل کی جگہ وین پارنل کو کھلایا جائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ملنگا انگلینڈ کے خلاف کتنے مؤثر ہو سکتے ہیں، کرکٹ شائقین کی نظر ان پر ہوگی

دوسرا میچ انتہائی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ کرکٹ شائقین یہ سوچ رہے ہیں کہ آیا انگلینڈ سری لنکا کی جیت کے سلسلے کو توڑ سکتا ہے یا پھر سری لنکا سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کرنے کی سمت میں مزید ایک قدم بڑھائے گا۔

سری لنکا نے حالیہ دنوں اچھی کرکٹ کھیلی ہے اور کھیل کے ہر شعبے میں بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔ اس کے پاس ورلڈ کلاس بولر اور بیٹسمین دونوں ہیں جو مختلف قسم کے حالات میں کھیلنے کا تجربہ رکھتے ہیں۔

انگلینڈ کی بولنگ ان کی سب سے بڑی کمزوری کے طور پر سامنے آئی ہے اور اپنے گذشتہ چھ میچوں میں سے اسے پانچ میچوں میں شکست کا سامنا رہا ہے۔

نیوزی لینڈ کے خلاف میچ میں بارش کی وجہ سے اسے ہار کا سامنا رہا تھا۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ سری لنکا اپنی ٹیم میں بدلاؤ نہیں کرنا چاہے گی لیکن انگلینڈ اپنی بیٹنگ اور بولنگ میں کچھ تبدیلی لا سکتی ہے۔

اسی بارے میں