ٹی ٹوئنٹی وکٹوں کی سنچری پر نظر ہے

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سیعد اجمل ٹی ٹوئنٹی کے کامیاب باؤلروں میں شامل ہیں

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے آف سپنر سعید اجمل کی خواہش ہے کہ جتنا جلد ہوسکے وہ ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں وکٹوں کی سنچری مکمل کرنے والے پہلے باؤلر بن جائیں۔

سعید اجمل نے 61 ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے 83 وکٹیں حاصل کررکھی ہیں۔

اس طرز کی کرکٹ میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے باؤلرز میں سعید اجمل کے بعد عمرگل ( 77 وکٹیں ) اور شاہد آفریدی ( 75وکٹیں ) شامل ہیں۔

سعید اجمل کا کہنا ہے کہ جس طرح شاہد آفریدی ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں وکٹوں کی نصف سنچری مکمل کرنے والے پہلے باؤلر بنے تھے اسی طرح وہ سو وکٹوں کا سنگ میل عبور کرنے والا پہلا باؤلر بنناچاہتے ہیں یقیناً یہ سنگ میل کافی عرصے سے ان کی نظر میں ہے جس تک وہ جلد سے جلد پہنچنا چاہتے ہیں۔

چھتیس سالہ سعید اجمل چھ سال سے پاکستانی باؤلنگ اٹیک میں فیصلہ کن کردار ادا کر رہے ہیں لیکن انہیں اس بات پر کوئی پریشانی نہیں ہے کہ صرف ان ہی پر بے پناہ توقعات وابستہ کیے جانے پر ان پر بہت زیادہ دباؤ ہوتا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ وہ اپنی کرکٹ سے بھرپور لطف اٹھا رہے ہیں۔ کپتان انہیں جو بھی ذمہ داری دیتے ہیں وہ اس ذمہ داری کو پورا کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ وہ خود پر کوئی اضافی دباؤ محسوس نہیں کرتے کہ دوسرے باؤلرز کامیاب ہورہے ہیں یا نہیں لیکن پاکستانی باؤلنگ کافی متوازن ہے جیسا کہ اس ٹورنامنٹ میں عمرگل کا ردھم بھی واپس آیا ہے ذوالفقار بابر نے بھی عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔ ہر کھلاڑی دوسرے کی ہمت بڑھا رہا ہے۔

سعید اجمل پرامید ہیں کہ پاکستانی ٹیم بنگلہ دیش اور ویسٹ انڈیز کے خلاف دونوں میچز جیت کر ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے سیمی فائنل میں پہنچ جائے گی۔

کرس گیل سے ممکنہ مقابلے کے بارے میں سوال پر سعید اجمل کا کہنا ہے کہ وہ ہر میچ میں سو فیصد کارکردگی دکھانا چاہتے ہیں اور جو بھی بیٹسمین ان کے سامنے ہوتا ہے وہ ان کا ہدف ہوتا ہے۔

انھوں نے کرس گیل یا مارلن سیمیولز کے بارے میں کوئی خاص حکمت عملی کے بارے میں نہیں سوچا بلکہ موقع کی مناسبت سے وہ کپتان اور کوچ کی بنائی گئی حکمت عملی کے تحت باؤلنگ کرتے ہیں۔

سعید اجمل سے پوچھا گیا کہ عمران طاہر اور امیت مشرا نے ہر میچ میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے تو دونوں کی کارکردگی آپ کو بھی کچھ کرنے کے لیے اکسارہی ہے؟ تو ان کا جواب تھا کہ وہ ہر میچ میں ایسی کارکردگی کا سوچ کر میدان میں اترتے ہیں جو ٹیم کو کامیابی سے ہمکنار کرے۔ ان کی کوشش ہوگی کہ اگلے میچوں میں وہ میچ وننگ پرفارمنس دیں۔

سعید اجمل نے بھارت کے خلاف اٹھارہ رنز کے عوض ایک وکٹ حاصل کی تھی جبکہ آسٹریلیا کے خلاف بھی ایک کھلاڑی کو تنتیس رنز دے کر آؤٹ کیا تھا۔

سعید اجمل کا کہنا ہے کہ میرپور میں وکٹیں سپنرز کے لیے سازگار ہیں۔

واضح رہے کہ ایشیا کپ میں سعید اجمل نے گیارہ وکٹیں حاصل کی تھیں۔

اسی بارے میں