ورلڈ ٹی 20: ویسٹ انڈیز سری لنکا پہلا سیمی فائنل جمعرات کو

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption سری لنکا اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں دو سال قبل کولمبو میں آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے فائنل میں مدمقابل ہوئی تھیں جس میں ویسٹ انڈیز نے 36 رنز سے کامیابی حاصل کی تھی

آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کا پہلا سیمی فائنل دفاعی چیمپئین ویسٹ انڈیز اور سری لنکا کے درمیان کھیلا آج جا رہا ہے۔

ویسٹ انڈیز نے آخری گروپ میچ میں پاکستان کو 84 رنز سے آؤٹ کلاس کر کے سیمی فائنل میں جگہ بنائی ہے۔

یہ اس کی ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچوں میں سب سے بڑی جیت بھی ہے۔

ویسٹ انڈیز نے بھارت سے پہلا میچ ہارنے کے بعد عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بنگلہ دیش، آسٹریلیا اور پاکستان کو شکست دی ۔

ویسٹ انڈیز کی اس عمدہ کارکردگی میں اس کے بولرز سیمیول بدری، سنیل نارائن اور کرشمار سینتوکی کا کردار بہت اہم رہا ہے۔ بدری نے چار میچوں میں10 وکٹیں حاصل کر رکھی ہیں۔نارائن اور سینتوکی کی چھ چھ وکٹیں ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سری لنکا ویسٹ انڈیز کے خلاف بھی اپنے سپنرز پر انحصار کرے گی جبکہ بیٹنگ میں اس کے پاس مہیلا جے وردھنے، کمار سنگاکارا، دلشن اور کوشل پریرا کی شکل میں ٹی ٹوئنٹی کے آئیڈیل بلے باز موجود ہیں

ویسٹ انڈیز کی بیٹنگ میں اگرچہ کرس گیل نے صرف ایک نصف سنچری بنائی ہے لیکن وہ کسی بھی وقت میچ کا نقشہ بدلنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ان کے علاوہ ڈواین سمتھ، ڈیرن سیمی، ڈواین براوو اور سیمیولز کو سری لنکن ٹیم کسی صورت میں آسان نہیں سمجھے گی۔

کپتان سیمی کا اس ٹورنامنٹ میں اسٹرائیک ریٹ 224 ہے۔

سری لنکا کی ٹیم گروپ ون کے تمام میچز چٹاگانگ میں کھیلنے کے بعد ڈھاکہ آئی ہے۔ وہ گروپ ون میں سرفہرست رہی تھی۔

سری لنکن ٹیم کافی عرصے بنگلہ دیش میں موجود ہے اس دوران اس نے بنگلہ دیش کے خلاف سیریز جیتنے کے علاوہ ایشیا کپ بھی جیتا لہذا اس کے کھلاڑی یہاں کے موسم اور وکٹوں سے مکمل طور پر ہم آہنگ ہو چکے ہیں۔

سری لنکا ویسٹ انڈیز کے خلاف بھی اپنے سپنرز پر انحصار کرے گی جبکہ بیٹنگ میں اس کے پاس مہیلا جے وردھنے، کمار سنگاکارا، دلشن اور کوشل پریرا کی شکل میں ٹی ٹوئنٹی کے آئیڈیل بلے باز موجود ہیں۔

شیرِ بنگلہ سٹیڈیم میرپور میں کھیلے گئے میچوں میں سپنرز کی چاندی رہی ہے۔

سری لنکا اور ویسٹ انڈیز کی ٹیمیں دو سال قبل کولمبو میں آئی سی سی ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے فائنل میں مدمقابل ہوئی تھیں جس میں ویسٹ انڈیز نے 36 رنز سے کامیابی حاصل کی تھی۔

اسی بارے میں