واکا واکا کی دھن پر رقص

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption معروف گلوکارہ شکیرا نے جنوبی افریقہ میں ہونے والے سنہ 2010 ورلڈ کپ کے لیے تھیم گیت گایا تھا

برازیل کے دارالحکومت برازيليا میں اتوار کی صبح زیادہ تر لوگوں کو اس وقت اپنی آنکھوں پر یقین نہیں آیا جب انھوں نے دیکھا کہ کیمرون کی ٹیم کے 60 پرستاروں کا ایک گروپ اپنی ٹیم کا انتظار کر رہا ہے۔

کیمرون کی ٹیم پہلے ہی ورلڈ کپ سے باہر ہو چکی ہے اور اپنا آخری میچ پیر کی شام کو کھیلے گی۔

اس افریقی ملک کے پرستار پرچم اور باجے کے ساتھ ’واكا واكا‘ گیت گا رہے تھے اور اس کی لے پر رقص کر رہے تھے۔ ایسا لگ رہا تھا کہ انھیں ان کی ٹیم کے پہلے ہی دور میں ورلڈ کپ سے باہر ہونے کا کوئی ملال نہیں۔

’واكا واكا‘ کیمرون کا روایتی گیت ہے۔ برازیل میں سنہ 2009 سے رہائش پذیر یونیورسٹی کے طالب علم اور کیمرون کے باشندے 23 سالہ امینوئل فریرا نے کہا: ’واكا واكا ہمارے لیے فٹبال کا ترانہ بن چکا ہے۔‘

انھوں نے کہا: ’جب اس موسیقی کو جنوبی افریقہ میں ہونے والے سنہ 2010 کے عالمی کپ کے لیے منتخب کیا گیا اور شکیرا نے اسے گایا تو یہ ہمارے لیے فخر کی بات تھی۔ اسی وقت سے ’واكا واكا‘ فٹبال کا مترادف بن گیا ہے۔ ہم اس گیت کو اپنے ہیروز کے لیے گانے کا موقع نہیں گنوا سکتے۔‘

شکر ہے فون بچ گیا

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بیلجیم اور روس کے درمیان میچ میں بیلجیم نے ایک گول سے جیت حاصل کی تھی

بیلجیئم اور روس کے درمیان اتوار کو کھیلے جانے والے میچ میں وقفے کے دوران برازیل کی ٹی وی رپورٹر فرنینڈا جنٹل برازیل کی ٹیم کے بارے میں کچھ معلومات دینے کے لیے گلوبو چینل پر لائیو مخاطب ہوئیں۔

لیکن ابھی پیش کار کرسٹیئن ڈايس ان سے بات کرنے کے لیے تیار ہو ہی رہی تھیں کہ فرنینڈا کا فون لائیو نشریات کے درمیان ہی بج اٹھا۔ ایسے میں انھیں یہ سمجھ میں نہیں آیا کہ انھیں فون پر بات کرنی چاہیے یا پھر میزبان کے سوال کا جواب دینا چاہیے۔

براہ راست نشریات کے دوران ہی فرنینڈا نے کہا: ’میں خبر کے لیے تیار ہو رہی تھی کہ میں نے اپنے سیل فون کی آواز سنی اور اسی دوران میرا فون ہاتھ سے چھوٹ گیا۔ میں امید کرتی ہوں کہ یہ ٹوٹا نہیں ہوگا۔ نہیں، یہ ٹوٹا نہیں۔‘

اس کے بعد انھوں نے برازیل کے کوچ سكولاري کی قیادت میں کھیلنے والی برازیل کی ٹیم کی سرگرمیوں کے بارے میں رپورٹ پیش کی۔

نسل پرستانہ رویے کی تحقیقات

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption گھانا کےخلاف ميچ کے دوران جرمنی کے شائقین

فیفا نے کہا ہے کہ وہ سنیچر کو گھانا کے خلاف کھیلے جانے والے میچ میں جرمنی کے حامیوں کی جانب سے نازی اور نسل پرستانہ رویے کی جانچ کرے گی۔

فٹ بال کا ریگولیٹری ادارہ ایک ایسے واقعے کی تحقیقات کر رہا ہے جس میں ایک پرستار میدان میں گھس آیا تھا اور اس نے اپنے جسم پر نازیوں کا نعرہ پینٹ کروا رکھا تھا۔

اس کے ساتھ ہی فیفا سٹیڈیم میں بیٹھے ہوئے جرمنی کے بعض پرستاروں کی جانب سے نسل پرستانہ رویے کی بھی تحقیقات کی جا رہی ہے۔

میدان میں داخل ہونے والے شخص نے اپنے جسم پر ’ایچ ایچ‘ (ہٹلر زندہ باد) اور ’ایس ایس‘ (نازی جرمنی کا مسلح دستہ) لکھ رکھا تھا۔ سٹیڈیم میں بیٹھے کئی شائقین نے گھانا کی ٹیم کی نسبت سے اپنے چہرے کو سیاہ رنگ سے رنگ لیا تھا۔

اسی بارے میں