پاکستان کو ایک رن سے شکست، سیریز میں تین صفر سے شکست

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اوپننگ بیٹسمین ڈیوڈ وارنر نے ایک مرتبہ پھر جارحانہ بیٹنگ کرتے ہوئے نصف سنچری سکور کی

ابوظہبی میں جاری تیسرے اور آخری ایک روزہ میچ میں آسٹریلیا نے پاکستان کو ایک دلچسپ مقابلے کے بعد ایک رن سے شکست دے کر ایک روزہ سیریز تین صفر سے جیت لی ہے۔

آسٹریلیا نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے پاکستان کو جیت کے لیے 232 رنز کا ہدف دیا تھا۔

پاکستان کی جانب سے شہزاد اور سرفراز نے اننگ کا آغاز کیا۔ پاکستان کی پہلی وکٹ 56 کے مجموعی سکور پر اس وقت گری جب شہزاد 26 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔

تفصیلی سکور کے لیے کلک کریں

پاکستان کی جانب سے قابل ذکر بیٹنگ سرفراز نے کی جنھوں نے 32 رنز سکور کیے اور اسد شفیق نے 73 گیندوں میں 50 رنز سکور کیے۔

فواد عالم صفر پر آؤٹ ہوئے۔ عمر امین پاکستان کو جیت سے قریب کرنے کی کوشش میں 19 رنز پر آوٹ ہوئے۔

شاہد آفریدی صرف چھ رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہو گئے ہیں۔ شاہد کے آؤٹ ہونے کے ساتھ پاکستان کے چھ کھلاڑی پویلین واپس لوٹ چکے ہیں۔

اس سے قبل آسٹریلیا نے ٹاس جیت کی پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔ آسٹریلیا کے ابتدائی بلے بازوں نے انتہائی عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے ٹیم کو عمدہ آغاز فراہم کیا۔ آسٹریلیا کی پہلی وکٹ 48 رنز پر گری جب ایرن فنچ انور علی کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوئے۔

اوپنر ڈیوڈ وارنر اور مڈل آرڈر سٹیفن سمتھ نے عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے ٹیم کا سکور سو رنزتک پہنچا دیا جب ڈیوڈ وارنر نصف سنچری مکمل کر کے شاہد آفریدی کے ہاتھوں آؤٹ ہوئے۔ سٹیفن سمتھ نے 77 رنز کی عمدہ اننگز کھیلی۔

میچ کے درمیانی اوروں میں پاکستانی بولروں نے قدرے بہتر بولنگ کا مظاہرہ کیا اور آسٹریلیا کو کھل کر کھیلنے کا موقع نہیں دیا۔میچ کے اختتامی اوروں میں آل رونڈر فوکنر نے 33 رنز کی عمدہ اننگز کھیل کر ٹیم کا سکور 231 تک پہنچا دیا۔

پاکستان کی جانب سہیل تنویر سب سے کامیاب بولر رہے اور دس اوروں میں چالیس رنز دے کر تین وکٹیں حاصل کیں۔

اس میچ میں کپتان مصباح الحق اور بیٹسمین عمر اکمل نہیں کھیل رہے ہیں۔ شاہد آفریدی اس میں کپتانی کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP GETTY
Image caption مصباح الحق مسلسل 75 ون ڈے انٹرنیشنل میچوں میں پاکستانی ٹیم کی قیادت کرنے کے بعد پہلی بار کوئی میچ نہیں کھیل رہے ہیں

مصباح الحق کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ انہوں نے اپنی خراب بیٹنگ فارم کے پیش نظر خود یہ میچ نہ کھیلنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ٹیم انتظامیہ نے عمر اکمل کو ڈراپ کر دیا ہے۔ پاکستانی ٹیم ان کھلاڑیوں پر مشتمل ہے: احمد شہزاد، سرفراز احمد، اسد شفیق، صہیب مقصود، عمر امین، فواد عالم، شاہد آفریدی، انور علی، سہیل تنویر، ذولفقار بابر اور محمد عرفان۔

آسٹریلیا کے خلاف تین ون ڈے میچوں کی سیریز کے پہلے میچ میں مصباح الحق صفر اور دوسرے میچ میں پندرہ رنز بناکر آؤٹ ہوئے تھے۔

مصباح الحق کے یہ میچ نہ کھیلنے کے بارے میں پاکستان کرکٹ بورڈ کی خاموشی معنی خیز رہی کیونکہ میچ سے ایک دن قبل ہی ان کے نہ کھیلنے کی خبریں ذرائع ابلاغ میں آگئی تھیں اور ساتھ ہی مختلف تبصرے اور قیاس آرائیاں بھی شروع ہوگئی تھیں لیکن پاکستان کرکٹ بورڈ نے اس بارے میں کوئی وضاحت کرنا مناسب نہیں سمجھا۔

مصباح الحق مسلسل 75 ون ڈے انٹرنیشنل میچوں میں پاکستانی ٹیم کی قیادت کرنے کے بعد پہلی بار کوئی میچ نہیں کھیل رہے ہیں۔اس عرصے میں پاکستانی ٹیم نے چالیس ون ڈے میچوں میں کامیابیاں حاصل کیں ۔

مصباح الحق کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے اٹھارہ میں سے گیارہ ون ڈے سیریز جیتی ہیں۔

مصباح الحق گزشتہ سال ون ڈے انٹرنیشنل میں سب سے زیادہ 1373 رنز بناکر دنیا بھر میں سرفہرست رہے تھے۔

اس سال انہوں نے ایشیا کپ میں سری لنکا کے خلاف پہلے میچ میں73 اور پھر سری لنکا ہی کے خلاف فائنل میں65 رنز کی اننگز کھیلی تھیں تاہم سری لنکا کے دورے میں کھیلے گئے تینوں ون ڈے میں قابل ذکر کارکردگی کا مظاہرہ نہ کرپائے تھے۔