مشکوک بولنگ ایکشن جانچنے کا طریقہ بھی ’مشکوک‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اگست میں مقامی میڈیا سے بات کرتے ہوئے اولڈرسن نےآئی سی سی کی جانب سے کیے گئے ٹیسٹوں کے آزادانہ ریویو نہ کرانے پر سوال اٹھایا تھا

یونیورسٹی آف ویسٹرن آسٹریلیا نے حالیہ بائیومکینکس ٹیسٹ کے قابل اعتبار ہونے پر سوالات اٹھائے ہیں جن کے باعث کئی بین الاقوامی بولروں پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ 20 سالوں سے انٹرنیشنل کرکٹ کونسل غیرقانونی بولنگ ایکشن کے ٹیسٹ کے ماڈلز کی تشکیل لیے یونیورسٹی آف ویسٹرن آسٹریلیا پر انحصار کرتی رہی ہے۔

یونیورسٹی آف ویسٹرن آسٹریلیا نے رواں سال مارچ میں آئی سی سی کے ساتھ انٹیلیکچوئل پراپرٹی ایشو پر تعاون ختم کر دیا تھا۔

یونیورسٹی نے الزام عائد کیا ہے کہ آئی سی سی ان کے بائیومکینکس ٹیسٹ کا غلط استعمال کر رہی ہے۔

یاد رہے کہ مشکوک بولنگ ایکشن کی پاداش میں اب تک پاکستان کے سعید اجمل، سری لنکا کے سچیترا سنانائیکے اور نیوزی لینڈ کے کین ولیمسن پر پابندی لگ چکی ہے جبکہ ویسٹ انڈیز کے سنیل نارائن، پاکستان کے محمد حفیظ اور عدنان رسول کے باؤلنگ ایکشن کو ٹی ٹوئنٹی چیمپیئنز لیگ کے دوران مشتبہ رپورٹ کیا گیا۔

یونیورسٹی میں بائیو مکینکس کی ایسوسی ایٹ پروفیسر جیکلین اولڈرسن نے کرک انفو سے بات کرتے ہوئے کہا: ’ہم نے اپنا تعاون ختم کر دیا ہے۔ ہمیں شروع میں آئی سی سی سے شکایت تھی کہ وہ ہماری ریسرچ ہماری اجازت کے بغیر استعمال کر رہی تھی۔ لیکن اب مسئلہ یہ ہے کہ حالیہ ٹیسٹ میں شفافیت نہیں ہے۔‘

یونیورسٹی آف ویسٹرن آسٹریلیا نےخاص طور پر پاکستانی سپن بولر سعید اجمل کے ٹیسٹ پر تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ یونیورسٹی کے مطابق سعید اجمل کا ایکشن 2009 میں کلیئر قرار دیا گیا تھا۔

اولڈرسن کا کہنا ہے کہ 2009 میں ’گیند چھوڑنے کے فریم‘ کو سعید اجمل کے بولنگ ایکشن کو قانونی قرار دیے جانے میں بہت زیادہ اہمیت حاصل تھی۔

’سب سے زیادہ بولنگ ایکشن کے ٹیسٹ سعید اجمل کے کیے گئے۔ 2009 میں سعید اجمل کی بہت ساری گیندیں غیر قانونی ہوتیں اگر گیند چھوڑنے کا فریم 2-1 یا 0.008-0.004 سیکنڈ کے بعد ہوتا۔‘

یونیورسٹی آف ویسٹرن آسٹریلیا نے سعید اجمل کے کیے گئے ٹیسٹ پر چار تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

1۔ گیند چھوڑنے کے طریقۂ کار کو جانچنے کا طریقہ

2۔ مختلف جگہوں پر مارکر رکھنے کے نتائج

3۔ کُہنی کی فلیشن اور ایکسٹینشن کا اثر

4۔ ٹیسٹ میں ٹو ڈی کا مسلسل استعمال

اگست میں مقامی میڈیا سے بات کرتے ہوئے اولڈرسن نےآئی سی سی کی جانب سے کیے گئے ٹیسٹوں کے آزادانہ ریویو نہ کرانے پر سوال اٹھایا تھا۔

انھوں نے کہا: ’بولروں کے ٹیسٹ آزادانہ طور پر ہونے چاہییں۔‘

دوسری جانب انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کا کہنا ہے کہ جس طریقے سے بولروں کے بولنگ ایکشن کی جانچ کی جا رہی ہے وہ گذشتہ طریقۂ کار سے زیادہ جدید ہے۔

اسی بارے میں