’سوچا یہ موقع ضائع نہ کروں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سرفراز احمد کی دبئی ٹیسٹ میں 109 رنز کی اننگز ٹیسٹ کرکٹ میں ایڈم گلکرسٹ کے بعد کسی بھی وکٹ کیپر کی دوسری تیز ترین سنچری ہے

پاکستانی ٹیم کے وکٹ کیپر سرفراز احمد کو اب اس بات کا بخوبی اندازہ ہوگیا ہے کہ ٹیم میں رہنے کے لیے بیٹنگ کتنی اہمیت رکھتی ہے۔

یہی وجہ ہے کہ ٹیم میں واپسی کے بعد سے ان کی بیٹنگ کے جوہر خوب کھلے اور وہ کسی مستند اور منجھے ہوئے بلے باز کی طرح کھیلتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں۔

سری لنکا کے خلاف ٹیسٹ سیریز کی چاروں اننگز میں انھوں نے ایک سنچری اور تین نصف سنچریاں بنائیں اور اب دبئی میں بھی وہ ایک اہم اننگز کھیلنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

’بیٹنگ پر میں پہلے بھی توجہ دیتا تھا لیکن رنز نہیں ہو رہے تھے اس بار ٹیم میں واپسی ہوئی تو ملنے والے اس موقع کو آخری جانا اور کوشش کی کہ جس انداز سے میں ڈومیسٹک کرکٹ میں کھیلتا ہوں اسی طرح انٹرنیشنل کرکٹ میں بھی کھیلوں۔‘

سرفراز احمد کی دبئی ٹیسٹ میں 109 رنز کی اننگز ٹیسٹ کرکٹ میں ایڈم گلکرسٹ کے بعد کسی بھی وکٹ کیپر کی دوسری تیز ترین سنچری ہے۔

یہ پاکستان کی جانب سے ٹیسٹ کرکٹ میں چوتھی تیز ترین سنچری بھی ہے۔

’مجھے اس بات کا قطعاً اندازہ نہیں تھا کہ میں نے کوئی ریکارڈ قائم کیا ہے۔ خوشی اس بات کی ہے کہ سنچری بنائی۔‘

سرفراز احمد جب بیٹنگ کے لیے گئے تو انھیں صرف یہی کہا گیا تھا کہ اپنا قدرتی کھیل کھیلنا۔

’وقاریونس نے مجھ سےکہا کہ جو تمہارا قدرتی کھیل ہے وہ کھیلنا لیکن مچل جانسن کے خلاف اگر سٹروکس نہیں کھیل سکتے تو اس کے تین چار اوورز کا سپیل گزار لینا۔‘

سرفراز احمد محمد حفیظ کی غیرموجودگی میں آسٹریلیا کے خلاف ون ڈے سیریز میں اوپنر کی حیثیت سے کھیلے تھے لیکن ٹیسٹ میں وہ اپنی ساتویں نمبر کی بیٹنگ سے خوش ہیں تاہم جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا آپ میں ڈبل سنچری سکور کرنے کی صلاحیت ہے تو ان کا جواب تھا یہ اتنا آسان نہیں ہے۔

’ساتویں نمبر پر بیٹنگ کرتے ہوئے ڈبل سنچری سکور کرنے کے مواقع کم ہوتے ہیں تاہم اگر کسی اچھے بلے باز کا ساتھ رہا تو میں بڑی اننگز بھی کھیل سکتا ہوں لیکن جب ٹیل اینڈرز آجاتے ہیں تو پھر ان کے ساتھ صورتِ حال کو دیکھتے ہوئے بیٹنگ کرنی پڑتی ہے۔‘

سرفراز احمد کو اپنی بیٹنگ میں سوئپ شاٹس کھیلنا بہت پسند ہے۔

سوئپ دراصل ایسا شاٹ ہے جس پر بلے باز کو رنز ملتے ہیں۔ میں معین خان کو یہ شاٹ کمال مہارت سے کھیلتے دیکھتا آیا ہوں لہذا میں بھی ایسا ہی کرنے کی کوشش کرتا ہوں۔‘

اسی بارے میں