سرفراز احمد کا بیٹ رکنے والا نہیں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سرفراز احمد اوپننگ کرنے آئے اور 76 رنز کے ساتھ ناٹ آؤٹ رہے

پہلے ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں ہر چیز پاکستانی ٹیم کی توقعات کے مطابق رہی۔

بولرز نے پہلے نیوزی لینڈ کی اننگز کو 135 رنز تک محدود رکھا اور پھر ایک سال بعد دوبارہ ٹی ٹوئنٹی ٹیم میں شامل کیے جانے والے وکٹ کیپر بیٹسمین سرفراز احمد کی 76 رنز ناٹ آؤٹ کی شاندار اننگز نے پانچ گیندیں پہلے سات وکٹوں کی جیت پر میچ کو ختم کیا۔

ان کی اننگز میں آٹھ چوکے اور دو چھکے شامل تھے۔ عمراکمل نے بھی بولرز پر غصہ تین چوکوں اور ایک چھکے کے ساتھ ستائیس رنز بناکر اتارا۔

نیوزی لینڈ کے کپتان کین ولیم سن پہلے ٹاس ہارے اور پھر حوصلہ۔

پہلے ہی اوور میں وہ اپنے ٹی ٹوئنٹی کریئر میں پہلی بار صفر کی خفت سے دوچار ہوئے اور اس کے بعد اگلے دو اوورز میں مزید دو وکٹیں گرنے سے نیوزی لینڈ کے لیے بڑے سکور تک پہنچنے کی امیدیں کو زد پہنچی۔

نیوزی لینڈ کو ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں سب سے زیادہ چھکے لگانے والے برینڈن مک کیولم رہ رہ کر یاد آئے ہوں گے جو فاسٹ بولرز ٹرینٹ بولٹ اور ٹم ساؤدی کے ساتھ وطن واپس جا چکے ہیں۔

ون ڈے انٹرنیشنل کی تیز ترین سنچری بنانے والے کورے اینڈسن اور مارٹن گپٹل کی نصف سنچری شراکت نے ابتدا ہی میں لگنے والے زخموں پر مرہم رکھنے کی کوشش کی۔

کورے اینڈرسن نے چار چھکوں اورایک چوکے سے شائقین کو محظوظ کیا لیکن سعد نسیم کے عمدہ کیچ نے انھیں نصف سنچری مکمل کرنے سے پہلے ہی جا لیا۔

لیوک رونچی کے چار چوکوں نے نیوزی لینڈ کا سکور اس میدان کے اوسطاً سکور کے قریب پہنچایا۔

پاکستان کے تمام چھ بولرز نے چھ سے زائد کی اوسط سے رنز دیے ان میں انور علی اور محمد حفیظ سب سے کم دو اوورز کرا کر سب سے مہنگے رہے۔

طویل قامت محمد عرفان اور سہیل تنویر کے حصے میں دو دو وکٹیں آئیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption عمر اکمل نے تین چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 27 رنز بنائے

اویس ضیا اور سرفراز احمد کی اوپننگ شراکت 51 رنز کی رہی تاہم اویس ضیا ایک بار پھر اپنی بیٹنگ کا بھرپور تاثر چھوڑنے میں ناکام رہے اور صرف 20 رنز بناکر آؤٹ ہوگئے ۔

یہ ان کا پانچواں ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل تھا اور اب تک ان کا بہترین انفرادی سکور صرف 23 رنز ہے۔

محمد حفیظ وکٹ کیپر رونچی کے صحیح نشانے پر رن آؤٹ کی صورت میں وکٹ سے محروم ہوئے۔

حارث سہیل بھی قابل ذکر اننگز نہ کھیل پائے لیکن پاکستانی اننگز کو سرفراز احمد نے تھامے رکھا جن کا بیٹ اس سیزن میں رکنے کا نام نہیں لے رہا۔

سرفراز احمد نے ٹیسٹ کرکٹ میں انٹری دی جس کے بعد انھیں عمراکمل کی جگہ ون ڈے میں کیپنگ گلوز سنبھالنے کے لیے کہا گیا اور اب 20 اوورز والی کرکٹ میں بھی انھوں نے اپنی اہمیت ثابت کردی ہے۔

اسی بارے میں