سچترا اور ولیمسن کے بولنگ ایکشن کلیئر: آئی سی سی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption آئی سی سی کے قوانین کے مطابق گیند پھینکتے وقت بولر کی کہنی کا خم 15 ڈگری سے کم ہونا چاہیے

کرکٹ کی نگراں تنظیم آئی سی سی نے سری لنکا اور نیوزی لینڈ کے دو کھلاڑیوں کے بولنگ ایکشن کو درست قرار دیا ہے۔

آئی سی سی نے سری لنکا کے آف سپنر سچترا سینانائیکے اور نیوزی لینڈ کے کین ولیمسن کو انٹرنیشنل کرکٹ میں بولنگ کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

سینا نائیکے کو رواں سال جولائی میں مشتبہ بولنگ ایکشن کے باعث بولنگ کرنے سے روک دیا گیا تھا۔ اس کے بعد انھوں نے اپنے ایکشن کو درست کیا۔

گذشتہ ماہ بھارت کے جنوبی شہر چینئی میں آئی سی سی کی جانب سے ان کے بولنگ ایکشن کی جانچ کی گئی جس کے بعد انھیں پھر سے بین الاقوامی کرکٹ میں بولنگ کرنے کی اجازت دے دی گئی۔

اسی طرح نیوزی لینڈ کے جزوی طور پر بولنگ کرنے والے کھلاڑی کین ولیمسن کی بولنگ کو ضابطے کے مطابق نہ پاتے ہوئے آئی سی سی نے ان کی بولنگ پر پابندی لگا دی تھی۔

انھیں بھی جانچ کے بعد بولنگ کی اجازت دے دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption کین ولیمسن نیوزی لینڈ کے بلے باز ہیں اور جزوی طور پر بولنگ بھی کرتے ہیں

آئی سی سی نے کہا ہے کہ ان دونوں کی جانچ میں پایا گیا کہ گیند کرنے کی صورت میں ان کی کہنیاں مجوزہ 15 ڈگری کی حد میں تھیں۔

آئی سی سی نے اس سال مشکوک بولنگ ایکشن کے بارے میں اپنی پالیسی انتہائی سخت کر رکھی ہے۔ پاکستان آل راؤنڈر محمد حفیظ اس سخت پالیسی کے تحت معطل ہونے والے چھٹے بولر ہیں۔

ان کے علاوہ اس پالیسی کا شکار ہونے والے کھلاڑیوں میں سری لنکا کے سینا نائیکے، زمبابوے کے پراسپر اتسیا، نیوزی لینڈ کے کین ولیمسن، بنگلہ دیش کے سہاگ غازی اور پاکستان کے سعید اجمل شامل ہیں۔

بنگلہ دیش کے فاسٹ بولر الامین حسین کا بولنگ ایکشن بھی مشکوک قرار پایا تھا لیکن وہ اپنے بورڈ کی طرف سے کرائے جانے والے پہلے ہی بائیومکینک تجزیے میں کلیئر ہوگئے تھے۔

اسی بارے میں