سعید اجمل کا نجی طور پر بائیو مکینک تجزیہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آئی سی سی کے تحت سعید اجمل کے بولنگ ایکشن کا سرکاری بائیو مکینک تجزیہ 24 جنوری کو بھارتی شہر چنئی کی لیبارٹری میں ہو گا

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے آف سپنر سعید اجمل نے انگلینڈ کے شہر ایجبسٹن میں اپنے بولنگ ایکشن کا نجی طور پر بائیو مکینک تجزیہ کروایا ہے جس کے بارے میں ان کا کہنا ہے کہ اس کی رپورٹ انتہائی حوصلہ افزا ہے۔

خیال رہے کہ آئی سی سی کے تحت سعید اجمل کے بولنگ ایکشن کا سرکاری بائیو مکینک تجزیہ 24 جنوری کو بھارتی شہر چنئی کی لیبارٹری میں ہو گا۔

سعید اجمل نے بدھ کو بی بی سی اردو سروس کو دیےگئے انٹرویو میں کہا کہ انھوں نے ایجبسٹن میں گذشتہ دنوں اپنے بولنگ ایکشن کا بائیو مکینک تجزیہ ذاتی طور پر کرایا جس سے پتہ چلا کہ وہ تمام گیندیں 15 ڈگری کے اندر رہتے ہوئے کر رہے ہیں جن میں ان کی مخصوص گیند ’دوسرا‘ بھی شامل ہے۔

سعید اجمل سے جب یہ سوال کیا گیا کہ ایجبسٹن میں جس لیبارٹری میں آپ نے بائیو مکینک تجزیہ کرایا اس میں نصب کیمرے اور دیگر آلات اسی طرح تھے جو آئی سی سی کی لیبارٹریز میں موجود ہیں تو ان کا جواب تھا 90 فیصد آلات اور کیمرے وہی تھے جو آئی سی سی کے ٹیسٹ میں ہوتے ہیں۔

سعید اجمل نے کہا کہ بھارت میں اپنے بولنگ ایکشن کا تجزیہ کرانے پر وہ کسی بھی قسم کے شک و شبے میں مبتلا نہیں کیونکہ یہ ٹیسٹ آئی سی سی کے پروٹوکول کے مطابق ہوگا جس میں وہی ماہرین ہوں گے جو دیگر شہروں کی لیبارٹریز میں ہونے والے ٹیسٹ کے موقع پر موجود ہوتے ہیں۔

سعید اجمل نے کہا کہ ورلڈ کپ نہ کھیلنے کا انھیں دکھ ضرور ہے لیکن وہ نہیں چاہتے تھے کہ اعتماد کے بغیر اتنے بڑے ایونٹ میں کھیلتے جس کے میچز میں غیرمعمولی دباؤ ہوتا ہے اسی لیے انھوں نے ورلڈ کپ سے دستبرداری کا فیصلہ کیا۔

سعید اجمل اس سے قبل بھی دو مرتبہ غیرسرکاری طور پر بائیو مکینک تجزیہ کرا چکے ہیں تاہم دونوں مرتبہ رپورٹ ان کے لحاظ سے حوصلہ افزا نہیں رہی تھی۔

سعید اجمل نے ٹیسٹ کرکٹ میں 178، ون ڈے میں 183 اور ٹی ٹوئنٹی میں85 وکٹیں حاصل کر رکھی ہیں۔

وہ ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے بولر بھی ہیں۔

سعید اجمل اب بھی آئی سی سی کی عالمی ون ڈے رینکنگ میں دوسرے اور ٹی ٹوئنٹی رینکنگ میں پانچویں نمبر پر ہیں۔

اسی بارے میں