’بڑے میچ کا دباؤ تھا لیکن بولرز کا رعب نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وقار نے سرفراز احمد کی صلاحیتوں کا اعتراف کیا اور سرفراز نے جنوبی افریقہ کے خلاف چھ کیچز لے کر عالمی ریکارڈ برابر کیا

سرفراز احمد جب سے بین الاقوامی کرکٹ میں واپس آئے ہیں انھوں نے خود کو پاکستانی ٹیم کا سب سے بیش قیمت کھلاڑی ثابت کردکھایا ہے۔

سری لنکا کے خلاف شارجہ ٹیسٹ سے نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز تک سرفراز احمد نے وکٹ کیپنگ سے زیادہ بیٹنگ میں اپنی موجودگی کا احساس دلایا۔

ورلڈ کپ کے پہلے چار میچوں میں سرفراز احمد کو کھیلنے کا موقع نہ مل سکا لیکن ناصر جمشید کے مسلسل ناکام رہنے کے سبب سرفراز احمد کو جنوبی افریقہ کے خلاف میچ میں اوپنر کی حیثیت سے کھلایا گیا اور اب وہ اپنی شاندار آل راؤنڈ کارکردگی کے سبب شہ سرخیوں میں ہیں۔

سرفراز احمد نے پہلے جارحانہ انداز میں اوپننگ کرتے ہوئے 49 رنز سکور کیے اور پھر چھ کیچز لے کر ون ڈے انٹرنیشنل میچ میں سب سے زیادہ کیچز لینے کے عالمی ریکارڈ برابری کی۔

سرفراز احمد بہت خوش ہیں کہ ان کی یہ کارکردگی ٹیم کے کام آئی لیکن وہ یہ بھی تسلیم کرتے ہیں کہ اس میچ سے قبل وہ خاصے دباؤ میں تھے۔

’ ورلڈ کپ کا یہ بہت بڑا میچ تھا اور میرا یہ عالمی کپ کا پہلا میچ تھا لہذا میں خاصا دباؤ محسوس کررہا تھا اس کی ایک وجہ یہ بھی تھی کہ اس میچ سے قبل کافی وقفہ آگیا تھا کہ میں کوئی میچ نہیں کھیل سکا تھا لیکن مجھے کپتان مصباح الحق اور کوچ وقاریونس نے بہت حوصلہ دیا کہ اپنا قدرتی کھیل کھیلنا تم بڑا سکور کرسکتے ہو۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سرفراز کو اپنے رن آ‎ؤٹ ہونے کا بے حد افسوس ہے کیونکہ ان کے مطابق وہ مشکل وقت سے نکل آئے تھے اور آسان وقت میں رن آؤٹ ہو گئے

ڈیل سٹین کی پہلی گیند کا سامنا کرتے ہوئے کیا احساسات تھے؟

’میں نے سٹین کی پہلی ہی گیند سے یہ اندازہ لگالیا تھا کہ کریز پر کھڑے ہوکر کھیلنا مشکل ہوگا چونکہ میری عادت ہے کہ کریز سے آگے ہوکر میں کھیلتا ہوں لہٰذا اس میچ میں بھی یہی کیا تاکہ بولرز کو لینتھ لائن درست رکھنے میں دشواری ہو۔ میں نے کوشش یہی کہ یہ نہ دیکھوں کہ بولر کون ہے؟ ان کی گیندوں کو دیکھوں۔‘

سرفراز احمد کو اپنے رن آؤٹ ہونے کا بہت افسوس ہے۔

انھوں نے کہا: ’میں توقع نہیں کررہا تھا کہ ڈیوڈ ملر اتنی تیزی سے گیند کی طرف آئیں گے۔میں مورکل کو دیکھ رہاتھا کہ گیند ان کے پاس جانے تک میں دو رنز لے لوں گا۔افسوس اس بات کا تھا کہ میں مشکل وقت نکالنے کے بعد آسان وقت میں آکر رن آؤٹ ہوا۔‘

سرفراز احمد کو میچ کے بعد پتہ چلا کہ انھوں نے چھ کیچز لے کر ایک ون ڈے میچ میں سب سے زیادہ کیچز کا عالمی ریکارڈ برابر کیا ہے۔

’مجھے یہ تو معلوم تھا کہ پاکستانی وکٹ کیپرز نے ایک میچ میں پانچ کیچز لیے ہیں لیکن میچ کے بعد یہ پتہ چلا کہ میں نے عالمی ریکارڈ برابر کردیا ہے تو بہت خوشی ہوئی کہ پاکستان اور میرا نام بھی ریکارڈ بک میں آگیا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ getty images
Image caption سری لنکا کے خلاف شارجہ ٹیسٹ سے نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز تک سرفراز احمد نے وکٹ کیپنگ سے زیادہ بیٹنگ میں اپنی موجودگی کا احساس دلایا

سرفراز احمد ہاشم آملہ کے کیچ کو ٹیم کے نقطہ نظر سے انتہائی اہم سمجھتے ہیں۔

’ہاشم آملہ بہت ہی جارحانہ بیٹنگ کررہے تھے اور اس وقت ٹیم کو وکٹ کی ضرورت تھی ۔وہاب ریاض کی گیند بہت اچھی تھی جس پر میں نے کیچ لیا جس سے پاکستانی ٹیم کو کافی حوصلہ ملا۔‘

سرفراز احمد کہتے ہیں کہ جس انداز سے اے بی ڈی ویلیئرز نے بیٹنگ کی اس سے ایک موقع پر یہ میچ ان کی گرفت میں جاتا دکھائی دے رہا تھا لیکن امید کا دامن ہاتھ سے نہیں چھوٹا تھا۔

’ یقیناً اے بی ڈی ویلیئرز نے بہت ہی عمدہ بیٹنگ کی لیکن ہم لوگ یہی کہہ رہے تھے کہ اگر اے بی ڈی ویلیئرز قابو میں نہیں آرہے ہیں تو دوسرے اینڈ پر بیٹسمینوں کو آؤٹ کرنے کی کوشش کی جائے۔ اس صورتحال میں اے بی ڈی ویلیئرز بھی غلطی کرسکتے ہیں اور ان کی وکٹ بھی ہمیں مل سکتی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption سرفراز کے مطابق ہاشم آملہ کا کیچ بڑی اہمیت کا حامل تھا

سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ وہ یہاں کرکٹ کھیلنے آئے ہیں اور میڈیا میں ان کی کوچ وقاریونس سے لڑائی کی خبریں سامنے آنے پر وہ سخت حیران ہیں۔

’ ایسا کوئی واقعہ نہیں ہوا ہے۔ کوچز ہوں یا کپتان یا کوئی اور سب پاکستان کی نمائندگی کے لیے یہاں آئے ہوئے ہیں اور کسی سے بھی لڑائی جھگڑے کا وہ سوچ بھی نہیں سکتے۔ اس وقت اس طرح کی منفی خبروں کے بجائے ضرورت اس بات کی ہے کہ ٹیم کی جتنی بھی ممکن ہوسکے حوصلہ افزائی کی جائے۔‘

اسی بارے میں