’ہر میچ کو آخری میچ سمجھ رہے ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption محمد عرفان بھارت کے خلاف میچ میں کوئی وکٹ حاصل نہیں کر پائے تھے

پاکستانی فاسٹ بولر محمد عرفان اپنے کپتان مصباح الحق کی اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ بیٹسمین جب تک اُن کے خلاف جارحانہ انداز اختیار نہیں کریں گے اُنھیں وکٹ نہیں ملے گی۔

محمد عرفان کو بھارت کے خلاف پہلے میچ میں 58 رنز دینے کے بعد بھی کوئی وکٹ نہیں ملی تھی لیکن اس کے بعد ان کی کارکردگی اچھی رہی ہے۔

وہ کہتے ہیں: ’مصباح کی یہ بات بالکل صحیح ہے کیونکہ شروع کے میچوں میں بیٹسمینوں نے میری بولنگ پر دفاعی انداز اختیار کیا تو مجھے مشکل ہوئی۔ میں چاہتا ہوں کہ بیٹسمین میری بولنگ پر اٹیک کرنے کی کوشش کریں جس سے مجھے بھی چیلنج ملتا ہے اگرچہ اس میں چوکے بھی لگتے ہیں لیکن وکٹ بھی ملتی ہے۔‘

ویسٹ انڈیز کے خلاف انھوں نے کرس گیل کی اہم وکٹ حاصل کی۔ زمبابوے کے خلاف اپنے کریئر کی بہترین بولنگ کرتے ہوئے محمد عرفان نے30 رنز کے عوض چار کھلاڑی آؤٹ کیے۔ متحدہ عرب امارات کے خلاف میچ میں وہ صرف تین اوور کروا سکے تھے لیکن جنوبی افریقہ کے خلاف اہم میچ میں انھوں نے تین وکٹیں 52 رنز دے کر حاصل کیں۔

پاکستانی کرکٹ ٹیم اس وقت ایڈیلیڈ میں ہے جہاں اسے 15مارچ کو آئرلینڈ کے خلاف میچ کھیلنا ہے جس میں جیت اسے کوارٹرفائنل میں لے جائے گی اور محمد عرفان اس اہم میچ میں اپنا کردار ادا کرنے کے لیے خاصے پر امید ہیں۔

’ورلڈ کپ میں اب جو صورت حال ہے اس میں ہر میچ بڑی اہمیت رکھتا ہے اور ہم ہر میچ کو آخری میچ سمجھ کر کھیل رہے ہیں اور مجھ سمیت ہر کھلاڑی کی یہی کوشش ہوگی کہ اپنی بھرپور صلاحیتوں کا مظاہرہ کرے اور ٹیم جیتے۔‘

محمد عرفان اپنی فٹنس سے بھی مطمئن ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’جنوبی افریقہ کے خلاف میچ میں ڈی ہائیڈریشن کی وجہ سے کریمپ پڑگیا تھا لیکن میں ایک اوور بعد ہی میدان میں واپس آگیا تھا اور اب میں پوری طرح ٹریننگ کر رہا ہوں اور فٹ ہوں۔‘

محمد عرفان کے خیال میں جنوبی افریقہ کو ہرانے سے کھلاڑیوں کے اعتماد میں اضافہ ہوا ہے۔

’جنوبی افریقہ ایک بڑی ٹیم ہے جس کے پاس ایسے کھلاڑی ہیں جو تنہا ہی میچ کا نقشہ بدل دیتے ہیں۔ ہماری ٹیم نے اسکور کم کیا تھا لہٰذا بولروں کو یہ بات اچھی طرح معلوم تھی کہ مکمل اعتماد سے بولنگ کرکے ہی جنوبی افریقی بیٹنگ کو قابو میں کیا جا سکتا ہے اور ایسا ہی ہوا۔‘

محمد عرفان جنوبی افریقہ کے اوپنر ڈی کاک کی وکٹ کو موقع کے لحاظ سے بہت اہم سمجھتے ہیں۔ ’مجھے کہا گیا تھا کہ جلد ایک وکٹ حاصل کرنی ہے تاکہ میچ کی سمت متعین ہو سکے۔ میں نے وہ چیلنج قبول کیا اور مجھے خوشی ہے کہ میں اننگز کی دوسری ہی گیند پر ڈی کوک کو آؤٹ کرنے میں کامیاب ہو گیا۔‘

محمد عرفان پہلی بار آسٹریلوی وکٹوں پر کھیل رہے ہیں یہی وجہ ہے کہ ابتدا میں انھیں خود کو ان وکٹوں سے ہم آہنگ ہونے میں وقت لگا۔ ’شروع میں مجھے دقت ہوئی لیکن جیسے ہی مجھے ان وکٹوں کا اندازہ ہو گیا میری کارکردگی میں بھی بہتری آ گئی۔‘

اسی بارے میں