پاکستان کے دورے نہ کرنے پر زرِ تلافی دینے کا فیصلہ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption زرِ تلافی کی رقم ایک سے تین لاکھ ڈالر کے درمیان ہو سکتی ہے: نظم الحسن

بنگلہ دیش کے کرکٹ بورڈ نے تین برس قبل پاکستان کے دو دورے منسوخ کرنے پر پاکستان کرکٹ بورڈ کو زرِ تلافی کی ادائیگی کا فیصلہ کیا ہے۔

سنہ 2012 میں بنگلہ دیش کی کرکٹ ٹیم نے پاکستان کے دورے پر آنا تھا تاہم پھر مبینہ طور پر سکیورٹی خدشات کی وجہ سے یہ دورے منسوخ کر دیے گئے تھے۔

بی سی بی کے صدر نظم الحسن نے سنیچر کو ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بورڈ نے معاملہ ختم کرتے ہوئے پاکستان کو دو دوروں کا زرتلافی ادا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ زرِ تلافی کی رقم ایک سے تین لاکھ ڈالر کے درمیان ہو سکتی ہے۔

پاکستان کے کرکٹ بورڈ نے اپنی ٹیم کے رواں ماہ ہونے والے دورۂ بنگلہ دیش کے تناظر میں کچھ شرائط عائد کی تھیں۔

نظم الحسن نے کہا کہ ’اب ان کی کوئی شرائط نہیں ہیں۔ پہلے انھوں نے آمدن کا 50 فیصد طلب کیا اور اس سیریز کو اپنی ہوم سیریز قرار دیا لیکن میں نے انھیں بتا دیا کہ یہ ہماری ہوم سیریز ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’آئی سی سی کا ایک قانون ایسی ٹیموں کے بارے میں موجود ہے جو دورے پر اتفاق کے بعد دوسرے ملک کا دورہ نہیں کرتیں۔ میں نے اس سے پوچھا کہ وہ ہمیں اس رقم کے بارے میں بتائیں جو ہمیں اس ٹور نہ کرنے پر ادا کرنی ہوگی۔‘

بی سی بی کے صدر نے بتایا کہ ’یہ رقم ایک سے تین لاکھ ڈالر کے درمیان ہو سکتی ہے۔ ہم دورہ نہ کرنے پر ایک مرتبہ یہ رقم ادا کریں گے۔‘

بی سی بی کے چیف ایگزیکیٹو افسر نظام الدین چوہدری نے کہا ہے کہ بورڈ آئندہ چند روز میں جرمانے کی رقم کا فیصلہ کر لے گا۔