اظہر اور یونس کی سنچریاں، پاکستان کی پوزیشن مستحکم

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اظہر علی نے چھ چوکوں کی مدد سے نصف سنچری مکمل کی

بنگلہ دیش کے خلاف دوسرے اور آخری کرکٹ ٹیسٹ میچ کے پہلے دن یونس خان اور اظہر علی کی سنچریوں کی بدولت پاکستان ٹیم کی پوزیشن مستحکم ہو گئی ہے۔

پہلے دن کھیل کے اختتام پر پاکستان نے تین وکٹوں کے نقصان پر 323 رنز بنا لیے ہیں۔

اس سے قبل یونس خان اور اظہر علی نے سنچریاں سکور کیں اور تیسری وکٹ کے لیے سکور میں 250 رنز کا اضافہ کیا۔ یونس خان 148 رنز بنا کر محمد شاہد کی گیند پر کیچ آؤٹ ہوئے جبکہ اظہر علی 127 رنز پر ناٹ آؤٹ ہیں۔

جمعرات کو میرپور میں کھیلے جانے والے میچ کے پہلے دن میزبان ٹیم نے ٹاس جیت کر پاکستان کو پہلے کھیلنے کی دعوت دی تو سمیع اسلم اور محمد حفیظ نے اننگز کا آغاز کیا۔

تاہم پاکستان کوصرف نو کے مجموعی سکور پر پہلا نقصان اٹھانا پڑا۔آؤٹ ہونے والے بلے باز محمد حفیظ تھے جنھیں محمد شاہد کی گیند پر مشفق الرحیم نے کیچ کیا۔

پہلے ٹیسٹ میں ڈبل سنچری بنانے والے حفیظ اس مرتبہ صرف آٹھ رنز ہی بنا سکے۔

پاکستان کی دوسری وکٹ 49 رنز کی شراکت کے بعد گری جب سمیع اسلم تیج الاسلام کی گیند پر کیچ دے بیٹھے۔

تاہم اس کے بعد یونس خان اور اظہر علی نے عمدہ بلے بازی کی اور اگلے دو سیشن میں بنگلہ دیش کو مزید کوئی کامیابی حاصل نہیں کرنے دی۔

قسمت نے بھی ان دونوں کا ساتھ دیا اور پہلے اظہر علی اور پھر یونس خان شاہد علی اور سومیا سرکار کی گیند پر کیچ ہوئے مگر یہ دونوں نو بالز تھیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پہلے ٹیسٹ میں ڈبل سنچری بنانے والے حفیظ اس مرتبہ صرف آٹھ رنز ہی بنا سکے

میچ کے پہلے ہی اوور میں بنگلہ دیشی ٹیم کو اس وقت دھچکا لگا تھا جب فاسٹ بولر شہادت حسین پیر میں تکلیف کی وجہ سے میدان سے باہر چلے گئے۔

تاہم وہ کچھ دیر بعد میدان میں واپس تو آئے لیکن کھانے کے وقفے تک مزید بولنگ نہیں کی۔

شہادت حسین کو اس ٹیسٹ میچ کے لیے بنگلہ دیشی ٹیم میں روبیل حسین کی جگہ شامل کیا گیا تھا جو پہلے ٹیسٹ میں زخمی ہوگئے تھے۔

پاکستان نے بھی اس میچ کے لیے ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے اور آف سپنر ذوالفقار بابر کی جگہ فاسٹ بولر عمران خان کو ٹیم میں شامل کیا ہے۔

پاکستان اس دورۂ بنگلہ دیش میں تاحال فتح کی تلاش میں ہے۔

اس کی ناکامیوں کا آغاز فتح اللہ میں پریکٹس میچ میں ایک وکٹ کی شکست سے ہوا تھا جس کے بعد بنگلہ دیش نے تینوں ون ڈے میچوں میں اسے آؤٹ کلاس کر دیا۔

دورے کا واحد ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل بھی پاکستانی ٹیم سات وکٹوں سے ہار گئی تھی۔

دونوں ٹیموں کے درمیان کھلنا میں کھیلا گیا پہلا ٹیسٹ بھی بےنتیجہ رہا تھا اور یہ پہلا موقع تھا کہ بنگلہ دیشی ٹیم نو ٹیسٹ میچوں میں پاکستان سے نہیں ہاری۔

اسی بارے میں