پاکستانی بولروں کے چہروں پر بالآخر مسکراہٹ آ ہی گئی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption میزبان ٹیم پر فالوآن کی تلوار لٹک رہی ہے جس سے بچ نکلنے کے لیے اسے اب بھی 251 رنز بنانے ہیں

پاکستانی کرکٹ ٹیم نے شاندار بیٹنگ، موثر بولنگ اور جارحانہ کپتانی سے میزبان ٹیم کے گرد گھیرا تنگ کر دیا ہے۔

اپنے ناقدین میں دفاعی کپتان کے طور پر مشہور مصباح الحق نے جارحانہ فیلڈ کے ساتھ بنگلہ دیشی ٹیم پر مسلسل حملہ کیے رکھا، جس کا نتیجہ پانچ قیمتی وکٹوں کی صورت میں سامنے آیا ہے اور اب میزبان ٹیم پر فالوآن کی تلوار لٹک رہی ہے جس سے بچ نکلنے کے لیے اسے اب بھی 251 رنز بنانے ہیں۔

جنید خان نے نئی گیند کے ساتھ گذشتہ ٹیسٹ میچ کے ڈبل سنچری میکر تمیم اقبال اور پھر مومن الحق کی وکٹیں حاصل کر کے بنگلہ دیشی ڈریسنگ روم میں ہلچل مچا دی۔

لیگ سپنر یاسر شاہ نے بھی بنگلہ دیشی ٹیم کو کچھ کم زخم نہیں دیے۔ ان کے شکاروں میں پچھلے ٹیسٹ کے سنچری میکر امروالقیس اور کپتان مشفق الرحیم شامل تھے۔

مشفق الرحیم کی آخری لمحات میں گرنے والی وکٹ کے بعد دم توڑتی مزاحمت میں آخری امید شکیب الحسن ہیں جو کھاتہ کھولنے سے پہلے ہی یاسر شاہ کی گیند پر سلپ میں یونس خان کے ہاتھوں کیچ ہونے سے بچے تھے۔

اس سے قبل پاکستانی ٹیم نے کپتان مصباح الحق کی گذشتہ روز کے سکور پر ہی وکٹ گنوانے کے بعد بنگلہ دیشی بولنگ کو زبردست سبق دے ڈالا۔

اظہرعلی اور اسد شفیق دونوں پچھلے ٹیسٹ میں سنچری کے قریب آ کر آؤٹ ہوئے تھے لیکن اس بار انھوں نے تین ہندسوں کو پار کیا۔

اظہرعلی نے اپنے کریئر کی پہلی ڈبل سنچری 19 چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے مکمل کی۔ جب وہ 226 رنز بناکر آؤٹ ہوئے تو ان کے نام کے آگے 20 چوکے اور دو چھکے درج ہو چکے تھے۔

اسد شفیق اور اظہرعلی نے اس اننگز میں پاکستانی ٹیم کے لیے دوسری ڈبل سنچری شراکت قائم کرکے بنگلہ دیشی بولروں کے رہے سہے حوصلے پست کردیے۔ اس سے قبل اظہرعلی اور یونس خان نے 250 رنز کی شراکت قائم کی تھی۔

میرپور ٹیسٹ کے تیسرے دن کا پہلا سیشن پاکستانی بولروں کے لیے اہم ہو گا کہ اگر وہ بقیہ پانچ وکٹیں اپنی گرفت میں لے لیتے ہیں تو بنگلہ دیش کا اس دورے میں ناقابل شکست رہنے اور پاکستانی ٹیم کو جیت کے بغیر وطن واپس بھیجنے کا خواب بکھر سکتا ہے۔

تاہم کرکٹ کے اس بے یقینی کھیل میں ہمیں یہ بھی یاد رکھنا چاہیے کہ کھلنا ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں 332 رنز بنانے والی بنگلہ دیشی ٹیم نے دوسری اننگز میں زبردست مزاحمت کرتے ہوئے پاکستان کی296 رنز کی برتری کو کسی وکٹ کے گرنے سے پہلے ہی ختم کر دیا تھا۔

فی الحال میزبان ٹیم کا پہلا ہدف فالوآن سے بچنا ہے۔

اسی بارے میں