پاکستان نے میرپور ٹیسٹ میں بنگلہ دیش کو ہرا دیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستانی بولروں نے دوسری اننگز میں نپی تلی بولنگ کی ہے

میرپور میں پاکستان نے دوسرے کرکٹ ٹیسٹ میچ میں بنگلہ دیش کو 328 رنز سے شکست دے کر دو میچوں کی سیریز ایک صفر سے جیت لی ہے۔

یہ دورۂ بنگلہ دیش کے دوران پاکستان کی پہلی فتح ہے اور اس کی نتیجے میں عالمی ٹیسٹ رینکنگ میں پاکستان کی تیسری پوزیشن پر موجودگی یقینی ہوگئی ہے۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پاکستان نے اس میچ میں بنگلہ دیش کو فتح کے لیے 550 رنز کا ہدف دیا تھا لیکن وہ میچ کے چوتھے دن دوسری اننگز میں کھانے کے وقفے کے بعد 221 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی۔

اظہر علی کو ڈبل سنچری بنانے پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا جبکہ دونوں میچوں میں سب سے زیادہ رنز بنانے پر وہ سیریز کے بہترن کھلاڑی بھی قرار پائے۔

سنیچر کو میزبان ٹیم کے لیے دوسری اننگز میں مومن الحق کے سوا کوئی بھی بلے باز وکٹ پر زیادہ دیر نہ ٹھہر سکا۔ مومن 68 رنز کے ساتھ ٹاپ سکورر ہے۔

بنگلہ دیش نے ایک وکٹ کے نقصان پر 63 رنز سے دوسری اننگز دوبارہ شروع کی تو تمیم اقبال اور مومن الحق نے سکور میں مزید 23 رنز کا اضافہ کیا۔

اس موقع پر عمران خان نے تمیم اقبال کو 42 رنز پر وکٹوں کے پیچھے کیچ کروا کے پاکستان کو اہم وکٹ دلوائی۔

تمیم اقبال اس پوری سیریز کے دوران شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے رہے۔ انھوں نے کھلنا ٹیسٹ میں بھی ڈبل سنچری بنا کر بنگلہ دیش کو میچ برابر کرنے میں مدد دی تھی۔

عمران خان نے ہی دو رنز بنانے والے محمود اللہ کو یونس خان کے ہاتھوں کیچ کروا کے بنگلہ دیش کی مشکلات بڑھا دیں۔

پہلی اننگز میں جارحانہ بلے بازی کرنے والے شکیب الحسن 13 رنز ہی بنا سکے اور حفیظ کی گیند پر وہاب ریاض کے ہاتھوں کیچ ہوگئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بنگلہ دیش کو یہ میچ بچانے کے لیے تمیم اقبال سے ایک بڑی اننگز کی امید تھی جو پوری نہ ہو سکی

کپتان مشفق الرحیم بغیر کوئی رن بنائے یاسر شاہ کی دوسری وکٹ بنے۔

پاکستان کو چھٹی کامیابی کھانے کے وقفے کے بعد فوراً ملی جب وہاب ریاض نے سومیا سرکار کی وکٹ لی۔

اسد شفیق نے یاسر شاہ کی گیند پرنصف سنچری بنانے والے مومن الحق کا عمدہ کیچ لے کر بنگلہ دیش کی امیدوں پر پانی پھیر دیا۔

میچ کے پہلے دن زخمی ہونے والے شہادت حسین دوسری اننگز میں بھی بلے بازی کے لیے نہ آ سکے اور یوں بنگلہ دیش کی اننگز نو وکٹوں کے نقصان پر 221 رنز پر ختم ہوگئی۔

پاکستان کی جانب سے دوسری اننگز میں یاسر شاہ چار وکٹوں کے ساتھ سب سے کامیاب بولر رہے جبکہ عمران خان نے دو جبکہ جنید خان، وہاب ریاض اور محمد حفیظ نے ایک ایک وکٹ لی۔

تیسرے دن پاکستان کی جانب سے 550 رنز کا ہدف ملنے کے بعد بنگلہ دیش نے کھیل ختم ہونے تک ایک وکٹ کے نقصان پر 63 رنز بنائے تھے۔

پاکستان نے اس میچ میں بنگلہ دیش کو پہلی اننگز میں 203 رنز پر آؤٹ کرنے کے باوجود فالو آن نہ کروانے کا فیصلہ کیا تھا اور دوسری اننگز چھ وکٹوں کے نقصان پر 195 رنز بنا کر ڈیکلیئر کر دی تھی۔

یہ اس میچ میں لگاتار دوسرا موقع تھا کہ پاکستان نے اننگز ڈیکلیئر کی۔ پہلی اننگز میں بھی پاکستان نے آٹھ وکٹوں کے نقصان پر 557 رنز بنانے کے بعد بنگلہ دیش کو بلے بازی کے لیے کہا تھا۔

ٹیسٹ سیریز میں شکست کے باوجود اس دورے کے دوران بنگلہ دیش کی کارکردگی بہت اچھی رہی ہے۔

بنگلہ دیش نے پہلے پاکستان کو تینوں ون ڈے میچوں اور پھر دورے کے واحد ٹی 20 انٹرنیشنل میچ میں بھی ہرایا تھا۔

دونوں ٹیموں کے درمیان کھلنا میں کھیلا گیا پہلا ٹیسٹ بھی بےنتیجہ رہا تھا اور یہ پہلا موقع تھا کہ بنگلہ دیشی ٹیم نو ٹیسٹ میچوں میں پاکستان سے نہیں ہاری۔

اسی بارے میں