لاہور میں دورۂ زمبابوے سے پہلے سخت حفاظتی انتظامات

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قذافی سٹیڈیم کے آس پاس موجود تمام کاروباری مراکز اور ریستورانوں کو بھی دو ہفتوں کے لیے بند کر دیا گیا ہے

پاکستان کے شہر لاہور میں زمبابوے کرکٹ ٹیم کے دورے سے پہلے سخت حفاظتی اِنتظامات کیے جا رہے ہیں۔

سنیچر کے روز پولیس کی ٹیموں نے زمبابوے ٹیم کی آمد سے قبل فُل ڈریس ریہرسل کی جس میں ایئر پورٹ سے نجی ہوٹل اور پھر قذافی سٹیڈیم تک سفر کر کے حالات کا جائزہ لیاگیا۔

قذافی سٹیڈیم کےآس پاس موجود تمام کاروباری مراکز اور ریستورانوں کو بھی دو ہفتوں کے لیے بند کر دیاگیا ہے جبکہ پولیس کی بھاری نفری بھی سٹیڈیم کے گردو نواح میں موجود رہی۔

واضح رہے کہ زمبابوے کی ٹیم منگل کو پاکستان پہنچےگی جہاں اُس نے دو ٹی 20 اور تین ایک دوزہ میچ کھیلنے ہیں جن کا باقاعدہ آغاز 22 مئی سے ہوگا۔

سنہ 2009 میں سری لنکن کرکٹ ٹیم پر لاہور میں حملے کے بعد یہ کسی بھی ٹیسٹ کھیلنے والی ٹیم کا پہلا دورہ پاکستان ہوگا۔

ضلعی رابطہ آفیسر کیپٹن ریٹائرڈ محمد عثمان کا کہنا ہے کہ دورہ زمبابوے کے لیے رینجرز کی خدمات بھی حاصل کی گئی ہیں اور اُن کو مختلف مقامات پر تعین کیا جائے گا تا کہ سکیورٹی کے معاملات میں کسی قسم کی کمی نہ رہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سنہ 2009 میں سری لنکن کرکٹ ٹیم پر لاہور میں حملے کے بعد یہ کسی بھی ٹیسٹ کھیلنے والی ٹیم کا پہلا دورہ پاکستان ہوگا

میچوں کے دوران موبائل فون بند کرنے کے حوالے سے کیپٹن عثمان کا کہنا تھا کہ اگر سکیورٹی اداروں کی جانب سے کوئی ایسی ہدایات جاری کی گئیں تو اُس کے بعد فیصلہ کیا جائے گا۔

ضلعی رابطہ آفیسر نے کہا کہ ہنگامی صورتحال میں فوری اِنخلا کے لیے بھی ایک پلان بنایا گیا ہے اور اِس مقصد کے لیے پولیس کو اُن کی ضرورت کے مطابق وسائل فراہم کیے جا رہے ہیں۔

کیپٹن عثمان کا کہنا تھا کہ زمبابوے کی ٹیم کے سفر کے دوران ٹریفک کی روانی برقرار رکھنے کے لیے بھی ایک جامع منصوبہ بھی تیار کیاگیا ہے جس سے شہریوں کو اشتہارات کے ذریعے آگاہ کیا جائے گا تا کہ وہ متبادل روٹ کا اِستعمال کر سکیں۔

انھوں نے کہا کہ سنیچر سے پاکستان کرکٹ بورڈ کی تشہیری مہم شروع ہو جائے گی جس میں ٹکٹ کے حصول ، کاروں کی پارکنگ اور داخلی راستوں کے بارے میں عوام کو معلومات فراہم کی جائیں گی۔

اسی بارے میں