’بدلتی کرکٹ کے مطابق بیٹنگ کر رہا ہوں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ’نئے کھلاڑیوں کے آنے سے پاکستانی ٹیم کی فیلڈنگ میں نمایاں بہتری آئی ہے‘

پاکستان کی ون ڈے کرکٹ ٹیم کے کپتان اظہرعلی کا کہنا ہے کہ وہ بدلتی کرکٹ کے تقاضوں کو ذہن میں رکھ کر بیٹنگ کر رہے ہیں۔

سری لنکا کے دورے سے وطن واپسی پر ایک انٹرویو میں اظہر علی نے کہا کہ جب وہ دوبارہ ون ڈے ٹیم میں آئے تو ان پر یقیناً دباؤ تھا۔

’انہیں اس بات کا بخوبی اندازہ تھا کہ کرکٹ اب بہت بدل گئی ہے اور اب ابتدا سے آپ کو ٹمپو برقرار رکھنا پڑتا ہے اور وکٹیں گرنے کی صورت میں بھی رن ریٹ کو گرنے نہیں دینا ہوتا ہے انہوں نے اسی بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے بیٹنگ کی ہے۔‘

یاد رہے کہ کپتان بننے کے بعد سے اظہر علی نے 11 ون ڈے انٹرنیشنل میں 36ء59 کی اوسط سے 563 رنز بنائے ہیں جن میں دو سنچریاں اور تین نصف سنچریاں شامل ہیں۔

اظہر علی نے اس تاثر کو غلط قرار دیا کہ تمام فیصلے کوچ وقار یونس کرتے ہیں اور وہ کسی دوسرے کو اہمیت نہیں دیتے۔

انہوں نے کہا کہ تمام فیصلے مشاورت سے ٹیم کے مفاد میں کیے جاتے ہیں۔جب آپ کسی معاملے پر بات کرتے ہیں تو کبھی کپتان کوچ کو قائل کرتا ہے تو کبھی کوچ کپتان کو قائل کرتا ہے لیکن وہ یہ بات بڑی ذمہ داری سے کہہ سکتے ہیں کہ تمام معاملات خوش اسلوبی سے طے پاتے ہیں۔

واضح رہے کہ اظہر علی ورلڈ کپ کے بعد پاکستانی ون ڈے ٹیم کے کپتان مقرر کیے گیے ہیں اور بنگلہ دیش کے خلاف پہلی ون ڈے سیریز ہارنے کے بعد ان کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے زمبابوے اور سری لنکا کے خلاف سیریز جیتی ہیں۔

اظہر علی نے کہا کہ پاکستانی ٹیم پر چیمپئنز ٹرافی کے لیے کوالیفائی کرنے کے لیے بہت دباؤ تھا اور اگر ٹیم کوالیفائی نہ کرتی تو یہ بڑی تکلیف دہ بات ہوتی لیکن ٹیم نے اسے چیلنج اور مثبت انداز میں لیتے ہوئے سیریز میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

اظہر علی کا کہنا ہے کہ نئے کھلاڑیوں کے آنے سے پاکستانی ٹیم کی فیلڈنگ میں نمایاں بہتری آئی ہے۔ون ڈے سیریز میں جیت ٹیم ورک کا نتیجہ رہی۔

انہوں نے کہا کہ سری لنکا کے خلاف سیریز جیتنے کے بعد اب پاکستانی ٹیم کو برصغیر سے باہر بھی اپنا ریکارڈ بہتر کرنا ہے اور اس کے لیے اسے مثبت اور جارحانہ کرکٹ کھیلنی ہوگی۔

اسی بارے میں