پاک بھارت کرکٹ: ’آئی سی سی کچھ نہیں کر سکتی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پاکستان اور بھارت کے درمیان ہونے والی کرکٹ پر دنیا بھر کی نظریں رہتی ہیں

آئی سی سی کے صدر ظہیر عباس نے واضح کیا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے کرکٹ روابط کی بحالی میں انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کچھ نہیں کر سکتی کیونکہ یہ دوطرفہ معاملہ ہے۔

ظہیر عباس نے لاہور میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پاک بھارت کرکٹ سیریز کا فیصلہ کرنا دونوں ملکوں کا کام ہے، اگر یہ دونوں ملک کھیلنے کا فیصلہ کریں گے تو سیریز ہوجائے گی لیکن اس ضمن میں آئی سی سی کچھ نہیں کر سکتی۔

انھوں نے کہا کہ ’تعلقات میں بہتری اچانک نہیں ہو جاتی، انھیں معمول پر آنے میں وقت لگتا ہے۔ تاہم کرکٹ کے فروغ کے لیے ضروری ہے کہ پڑوسی ملک ایک دوسرے کے ساتھ کھیلیں۔ پاکستان اور بھارت کے درمیان ہونے والی کرکٹ پر دنیا بھر کی نظریں رہتی ہیں اور یہ کرکٹ ہونی چاہیے۔‘

اس سے قبل بی بی سی سے بات کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہریار خان نے کہا تھا کہ ’پاک بھارت مذاکرات کی منسوخی کے نتیجے میں دونوں ملکوں کے درمیان کرکٹ سیریز کے امکانات بہت کم رہ گئے ہیں۔‘

شہریار خان کا کہنا تھا کہ ’اگر دونوں ممالک کے درمیان مذاکرات ہو جاتے تو پھر شاید ماحول بہتر ہو جاتا اور کرکٹ روابط کی بحالی بھی ہو سکتی تھی لیکن مذاکرات کی منسوخی نے کرکٹ سیریز کی امیدوں کو بھی کم کر دیا ہے۔‘

پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کی بحالی کے بارے میں ظہیرعباس نے کہا کہ جب یہاں حالات بہتر ہوتے چلے جائیں گے تو یقیناً غیرملکی ٹیمیں پاکستان کے دورے پر آئیں گی۔

سپاٹ فکسنگ میں سزایافتہ کرکٹروں کی پاکستانی ٹیم میں واپسی کے بارے میں ظہیر عباس نے کہا کہ اس کا انحصار پاکستان کرکٹ بورڈ پر ہے کہ وہ اس بارے میں کیا فیصلہ کرتا ہے۔

اسی بارے میں