’پیٹرسن کو نہ کھلانے سے ٹیم کو فائدہ ہوا‘

Image caption کیون پیٹرسن ابھی تک ہر فارمیٹ میں انگلینڈ سے سب سے کامیاب بیٹسمین ہیں

انگلینڈ اور ویلز کرکٹ بورڈ کے سربراہ اینڈریو سٹراس نے کہا ہے کہ نامور بیٹسمین کیون پیٹرسن کو ٹیم سے باہر رکھنے کا فیصلہ ٹیم کے لیے سود مند ثابت ہوا ہے۔

اینڈریو سٹراس نے انگلینڈ اور ویلز کرکٹ بورڈ کے سربراہ بننے کے بعد کیون پیٹرسن کو بتایا تھا کہ ٹیم میں ان کی واپسی ممکن نہیں ہے اور مستقبل میں انھیں ٹیم میں شمولیت کے لیے ان کے نام پر غور نہیں کیا جائے گا۔

اینڈریو سٹراس نے کہا: ’واضح موقف سے صورت حال کو واضح کرنے میں مدد ملی ہے۔‘ انگلینڈ نے حالیہ ایشز سیریز میں آسٹریلیا کو شکست دی تھی۔

کیون پیٹرسن کو آسٹریلیا میں کھیلی جانے والی گذشتہ ایشز سیریز میں ٹیم کی پانچ صفر کی ہزیمت کے بعد ٹیم سے باہر کر دیا گیا تھا۔

کیون پیٹرسن اب تک ہر فارمیٹ میں انگلینڈ کے سب سے کامیاب بیٹسمین ہیں۔

اینڈریو سٹراس نے کہا: ’ڈر تھا کہ اگر کیون پیٹرسن کو ٹیم میں شامل کر لیا گیا تو وہ سب کچھ جوگذشتہ موسم سرما میں پِچ پر ہوتا رہا ہے وہ ٹیم کے ماحول پر غالب آ جائے گا۔‘

انھوں نےکہا: ’میں صرف یہ کر رہا تھا کہ صورت حال کو واضح کروں اور کھلاڑیوں کو بتاؤں کہ ان کی ٹیم میں کیا پوزیشن ہے اور وہ کہاں کھڑے ہیں۔

’میں سمجھتا ہوں کہ ٹیم آگے بڑھ گئی ہے اور بہت اچھی پوزیشن میں ہے۔ کچھ نوجوان کھلاڑیوں نے اپنے آپ کو منوا لیا ہے اور ہماری توجہ اسی پر ہے۔‘

ایک روزہ میچوں کی سیریز میں انگلینڈ نے وکٹ کیپر جوس بٹلر کو ’آرام‘ دیے جانے کے بعد وکٹ کیپر جانی بیئرسٹو کو ٹیم میں شامل کر لیا ہے۔

ایشز سیریز میں فتح کے بعد انگلینڈ ایک روزہ میچوں کی سیریز میں ابھی تک دو صفر کے خسارے میں ہے۔

ادھر آسٹریلیا کو بھی اگلے ایک روزہ میچ میں تین تبدیلیاں کرنی پڑیں گی۔ راؤنڈر شین واٹسن، بیٹسمین ڈیوڈ وارنر، اور فاسٹ بولر نیتھن کولٹروائل زخمی ہونے کی وجہ سے سیریز کے بقیہ میچوں میں حصہ نہیں لے پائیں گے۔

آسٹریلیا کرکٹ بورڈ انگلش کاؤنٹی میں حصہ لینے تین آسٹریلوی کھلاڑیوں ایرن فنچ، جان ہیسٹنگ اور پیٹر ہینڈزکمب کو ٹیم میں شامل کر لیا ہے۔

اسی بارے میں