’19 رنز کا بےچینی سے انتظار تھا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یونس خان پاکستان کی طرف سے سب سے زیادہ رنز اور سنچریوں کے ریکارڈ کے باوجود وہ اپنی کارکردگی سے مطمئن نہیں ہیں

یونس خان جاوید میانداد کی جگہ اب پاکستان کی طرف سے ٹیسٹ کرکٹ میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے بلے باز بن گئے ہیں۔

جاوید میانداد سے یہ ریکارڈ اپنے نام منتقل کرنے کے باوجود یونس کہتے ہیں کہ وہ میانداد کی برابری نہیں کرسکتے کیونکہ وہ بجا طور پر عظیم بیٹسمین ہیں۔

پاکستان کا عظیم ترین بلے باز کون؟

ریکارڈ اور واپسی کا جشن ساتھ ساتھ

یونس خان کا ریکارڈ توڑ چھکا

یونس خان کا کہنا ہے: ’میں نے سوچا بھی نہیں تھا کہ میں کبھی جاوید میانداد کے رنز سے آگے نکل سکوں گا لیکن آج اگر یہ سب کچھ ہوا ہے تو اس کا کریڈٹ بھی جاوید میانداد کو جاتا ہے۔‘

ان کے مطابق میانداد نے انھیں کئی ایسی اہم باتیں انھیں بتائی تھیں جنھیں وہ آج بھی نہیں بھولے ہیں اور ان کے کریئر میں بہت کام آئی ہیں۔

یونس خان نے کہا کہ سری لنکا کے خلاف سیریز کے بعد سے انھیں ان 19 رنز کا بے چینی سے انتظار تھا اور یہ انتظار کافی صبر آزما تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ آج جب وہ بیٹنگ کے لیے جا رہے تھے تو کسی حد تک نروس تھے اور اسی لیے انھوں نے تیز کھیل کر یہ 19 رنز بنانے کی کوشش کی۔

یونس خان نے کہا کہ جاوید میانداد کا ریکارڈ توڑنے پر انھوں نے میدان میں زیادہ جوش و خروش کا مظاہرہ اس لیے نہیں کیا کیونکہ وہ اپنے کھیل پر توجہ مرکوز رکھتے ہوئے ٹیم کو اچھی پوزیشن میں لے جانا چاہتے تھے۔

انھوں نے کہا کہ انھیں اپنے مرحوم والد سے ہمیشہ حوصلہ ملا اور وہ انہی کی طرح سخت محنت پر یقین رکھتے ہیں۔

یونس خان نے کہا کہ پاکستان کی طرف سے سب سے زیادہ رنز اور سنچریوں کے ریکارڈ کے باوجود وہ اپنی کارکردگی سے مطمئن نہیں ہیں اور اس سے بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنا چاہتے ہیں اور یہ بات بھی انھیں جاوید میانداد نے سکھائی تھی کہ کرکٹ میں ہر دن نیا ہوتا ہے۔

اسی بارے میں