یقین ہے کہ بولنگ ایکشن کلیئر ہو جائے گا: بلال آصف

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ٹیم مینیجمنٹ اور ٹیم کے کھلاڑیوں نے اس موقعے پر زبردست حوصلہ دیا: بلال آصف

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے آف اسپنر بلال آصف کے لیے یہ بات کسی دھچکے سے کم نہیں تھی کہ ان کا بولنگ ایکشن رپورٹ ہوجائے گا لیکن بایو مکینک تجزیے کے بعد وہ بہت پرسکون ہیں اور انھیں یقین ہے کہ ان کا بولنگ ایکشن کلیئر ہو جائے گا۔

اب بلال آصف کا مستقبل کیا ہے؟

یاد رہے کہ بلال آصف کا بولنگ ایکشن پاکستان اور زمبابوے کے درمیان ہرارے میں کھیلے گئے آخری ون ڈے میں رپورٹ ہوا تھا لیکن چونکہ آئی سی سی کے قوانین کے تحت مشکوک بولنگ ایکشن کا حامل کوئی بھی بولر بائیو مکینک تجزیے کی رپورٹ آنے تک انٹرنیشنل کرکٹ میں بولنگ کر سکتا ہے، پاکستان کرکٹ بورڈ نے انھیں انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ سیریز کے اسکواڈ میں شامل کر لیا ہے۔

بلال آصف نے بی بی سی کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ کسی بھی دوسرے کرکٹر کی طرح وہ بھی آئی سی سی کے قوانین پر عمل کرنے کے پابند ہیں اور انھوں نے بڑے اعتماد سے بایو مکینک ٹیسٹ دیا ہے اور انھیں یقین ہے کہ ان کا بولنگ ایکشن کلیئر ہو جائے گا۔

بلال آصف کا کہنا ہے کہ جب انھیں بتایا گیا کہ ان کا بولنگ ایکشن رپورٹ ہوا ہے تو وہ حیران رہ گئے تھے کیونکہ اگر ان کے ’بولنگ ایکشن میں کوئی خرابی ہوتی تو زمبابوے کے خلاف پہلے ون ڈے میں ہی امپائر رپورٹ کر دیتے۔‘

بلال آصف نے کہا کہ ٹیم مینیجمنٹ اور ٹیم کے کھلاڑیوں نے انھیں اس موقعے پر زبردست حوصلہ دیا اور ان سب کو بھی یقین تھا کہ یہ کوئی بڑا مسئلہ نہیں ہے۔

بلال آصف کا کہنا ہے کہ زمبابوے جانے سے قبل پاکستان کرکٹ بورڈ نے نیشنل کرکٹ اکیڈمی میں دو تین بار ان کے بولنگ ایکشن کے ٹیسٹ لیے تھے اگر ان کے بولنگ ایکشن میں کوئی خرابی ہوتی تو انھیں پاکستانی ٹیم میں کیوں شامل کیا جاتا؟

بلال آصف کہتے ہیں کہ ان کی زندگی میں اتار چڑھاؤ آئے ہیں ایک وقت ایسا بھی آیا جب وہ دل برداشتہ ہوکر کرکٹ چھوڑنے پر مجبور ہوگئے کیونکہ سیالکوٹ کی ٹیم میں کئی بڑے کھلاڑی کھیلتے رہے ہیں اور ان کے لیے جگہ بنانا مشکل تھا۔ اسی دوران وہ روزگار کی خاطر بیرون ملک چلے گئے تاکہ اپنے گھر کی کفالت کر سکیں کیونکہ وہ کسی امیر فیملی سے تعلق نہیں رکھتے تاہم جب وہ دوبارہ وطن آئے تو ان کے والد نے ان کی ہمت بڑھائی اور انھوں نے دوبارہ کرکٹ کھیلنی شروع کر دی۔

بلال آصف کا کہنا ہے کہ انھیں شعیب ملک کی سخت محنت کی عادت بہت پسند ہے اسی لیے شعیب ملک ان کے آئیڈیل کرکٹر ہیں۔ وہ کوشش کرتے ہیں کہ انھی کی طرح محنت کریں۔

اسی بارے میں