’بھارت سے سیریز پر حکومت نے تاحال آگاہ نہیں کیا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Both Photos by AFP
Image caption ممکنہ طور پر پاکستان اور بھارت کے درمیان سیریز 15 دسمبر سے سری لنکا میں کھیلی جائے گی

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہریار خان کا کہنا ہے کہ پاکستان بھارت کرکٹ سیریز کے حوالے سے حکومت نے انھیں ابھی تک کچھ نہیں بتایا ہے۔

جمعرات کو لاہور میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے شہریار خان کا کہنا تھا کہ ’مجھے ابھی تک بھارت کے خلاف سری لنکا میں سیریز کھیلنے کی اجازت ملنے یا نہ ملنے کا کوئی خط، ٹیلی فون یا ای میل موصول نہیں ہوئی ہے۔‘

پاک بھارت کرکٹ، شہریار خان کا وزیراعظم کو خط

’بی سی سی آئی نے آمدنی سے حصہ نہیں مانگا‘

پاک بھارت کرکٹ سیریز، سری لنکا میزبانی پر تیار

انھوں نے مزید کہا کہ سریز کے حوالے سے وزیر اعظم پاکستان کے ساتھ کسی قسم کی بات چیت نہیں ہوئی ہے۔تاہم پی سی پی کے چیئرمین نے امید ظاہر کی انھیں کہ آئندہ ایک دو دنوں میں انھیں وزیر اعظم کی جانب سے ہدایات مل جائے گی۔

شہریار خان کا کہنا تھا کہ ’میں 37 سال سے سرکاری ملازم ہوں اور ہماری ٹریننگ یہ ہوئی ہے کہ جب تک تحریری طور پر کچھ نہ آجائے آپ اس پر تبصرہ نہ کریں۔لہذا جب میرے پاس تحریری طور پر حکم آگیا تو میں ضرور میڈیا کو آگاہ کروں گا۔‘

سیریز ہونے یا نہ ہونے کے اعلان کے حوالے سے انھوں نے کہا کہ ’ہو سکتا ہے کہ دونوں حکومتیں اپنے اپنے کرکٹ بورڈز کو آگاہ کریں یا یہ بھی ہو سکتا ہے کہ دونوں حکومتیں خود ہی سیریز کے حوالے سے اعلان کریں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بھارت کی ایک ویب سائٹ این ڈی ٹی وی کے مطابق جمعرات کو یہ اعلان دونوں جانب کی حکومتوں سے اس کی منظوری کے بعد ہی کیا گیا ہے

اس سے قبل انڈین پریمیئر لیگ کے چیئرمین راجیو شکلا کا کہنا تھا کہ بھارت اور پاکستان کے کرکٹ بورڈز نے ایک مختصر دوطرفہ کرکٹ سیریز سری لنکا میں کھیلنے پر اتفاق کر لیا ہے۔

ممکنہ طور پر تین ون ڈے اور دو ٹی 20 میچوں پر مشتمل یہ سیریز 15 دسمبر سے پڑوسی ملک سری لنکا میں کھیلی جائے گی۔

راجیو شکلا نے میڈیا سے بات چیت میں کہا تھا کہ ’بھارت پاکستان سیریز ممکنہ طور پر 15 دسمبر سے سری لنکا میں ہوگی۔ دونوں ملکوں نے اس پر اتفاق کر لیا ہے۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’دونوں ملکوں کے درمیان کرکٹ کا آغاز پانچ میچوں کی سیریز سے کیا جا سکتا ہے۔‘

بھارت کی ایک ویب سائٹ این ڈی ٹی وی کے مطابق جمعرات کو یہ اعلان دونوں جانب کی حکومتوں سے اس کی منظوری کے بعد ہی کیا گیا ہے۔

ابھی حکومت کی جانب سے اس بارے کوئی باقاعدہ بیان سامنے نہیں آیا لیکن اطلاعات کے مطابق اب اس سلسلے میں مزید قیاس آرائیوں کی گنجائش نہیں ہے اور تقریباً آٹھ برس بعد دونوں ملک دو طرفہ سیریز کھیل سکیں گے۔

اسی بارے میں