محمد عامر قومی تربیتی کیمپ میں شامل

سپاٹ فکسنگ میں ملوث سزا یا فتہ فاسٹ بولر محمد عامر پاکستانی کرکٹ ٹیم میں واپسی کے مزید قریب آ گئے ہیں۔

وہ ان 26 کھلاڑیوں میں شامل ہیں جنھیں پیر سے قذافی سٹیڈیم لاہور میں شروع ہونے والے قومی فٹنس اور تربیتی کیمپ میں شامل کیا گیا ہے۔

’عامر بولنگ کرنا جانتا ہے‘

محمد عامر کی سلیکشن پر غور کررہے ہیں: شہر یار

’سزایافتہ کرکٹرز کی فوری واپسی نہیں ہوگی‘

21 دسمبر سے سات جنوری تک منعقد ہونے والے اس کیمپ کے بعد نیوزی لینڈ کے دورے کے لیے پاکستانی ٹیم کا اعلان کیا جائے گا۔

پاکستانی ٹیم نیوزی لینڈ کے دورے میں تین ون ڈے اور تین ٹی20 انٹرنیشنل کھیلے گی۔

محمد عامر سپاٹ فکسنگ میں ملوث ہونے کی پاداش میں سزا مکمل ہونے کے بعد پہلے ہی ڈومیسٹک کرکٹ کھیل رہے ہیں اور گذشتہ دنوں انھوں نے بنگلہ دیشی پریمئیر لیگ میں بھی حصہ لیا تھا۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہر یارخان، چیف سیلیکٹر ہارون رشید اور ہیڈ کوچ وقار یونس محمد عامر کی واپسی کا گرین سگنل دے چکے ہیں۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہر یار خان نے صرف ایک ماہ قبل صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ جب تک وہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین ہیں، سپاٹ فکسنگ میں ملوث کوئی بھی کھلاڑی ٹیم میں واپس نہیں آئے گا۔

چیف سیلیکٹر ہارون رشید نے یکم ستمبر کو بی بی سی کو دیے گئے انٹرویو میں کہا تھا کہ محمد عامر کے لیے پاکستانی ٹیم میں ابھی جگہ نہیں ہے۔

پاکستانی ٹیم کے ہیڈکوچ وقار یونس اس وقت بھی کوچ تھے جب سنہ 2010 کے انگلینڈ کے دورے میں سپاٹ فکسنگ سکینڈل ہوا تھا اور وقار یونس ایک عرصے تک یہ کہتے آئے تھے کہ محمد عامر کو دوبارہ پاکستانی ٹیم میں نہیں آنا چاہیے۔ لیکن اب ان کا کہنا ہے کہ پاکستانی ٹیم کو محمد عامر کی ضرورت ہے۔

کیمپ کے لیے اعلان کردہ کھلاڑیوں میں احمد شہزاد، محمد حفیظ، شرجیل خان، اظہرعلی، شعیب ملک ، بابراعظم، افتخار احمد، عمراکمل، اسد شفیق، شاہد آفریدی، سرفراز احمد، محمد رضوان، بلال آصف، صہیب مقصود، عامر یامین، وہاب ریاض، انور علی، محمد عرفان، عمرگل، راحت علی، جنید خان، رومان رئیس، عماد وسیم، یاسرشاہ، سعد نسیم اور محمد عامر شامل ہیں۔

اسی بارے میں