عامر کی واپسی پر تحفظات ہیں: مصباح الحق

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق کا کہنا ہے کہ فاسٹ بولر محمد عامر کی واپسی پر کھلاڑیوں اور کپتانوں کے تحفظات ہیں اور یقیناً کرکٹ بورڈ کے لوگوں کے بھی ہوں گے۔

مصباح الحق نے بی بی سی کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ ’لوگ کہتے ہیں کہ محمد عامر نے سزا پوری کر لی ہے۔ یہ ٹھیک ہے کہ سب نے انھیں معاف کر دیا ہے کیونکہ کسی کی یہ ذاتی لڑائی نہیں ہے لیکن ان کی واپسی کا جو اثر ہوگا وہ بہت بڑا سوالیہ نشان ہے جس کا کسی کو ابھی اندازہ نہیں ہے۔‘

حفیظ اور اظہر کے خلاف کارروائی ہو سکتی ہے: شہریار خان

’اظہر، حفیظ دانائی سے کام لیں جذبات سے نہیں‘

عامر کی موجودگی پر اظہر اور حفیظ کا بائیکاٹ

مصباح الحق نے کہا کہ کسی بھی کپتان کے لیے محمد عامر کی موجودگی میں صورت حال کا سامنا کرنا انتہائی مشکل ہو گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مصباح الحق پاکستان سپر لیگ میں اسلام آْباد کی ٹیم کی قیادت کریں گے

پاکستان کی ٹیسٹ سیریز جولائی میں ہے لیکن اس سے قبل ٹیم نے ون ڈے اور ٹی 20 میچ کھیلنے ہیں ان حالات میں کپتانوں سے تیزو تند سوالات بھی ہوں گے اور کراؤڈ کے شدید ردعمل کا بھی سامنا کرنا پڑے گا لہٰذا یہ ایک ایسا معاملہ ہے جس پر بہت سوچ بچار کی ضرورت ہے۔

مصباح الحق نے پاکستان سپر لیگ کو پاکستانی کرکٹ کے لیے انتہائی اہم ایونٹ قراردیتے ہوئے کہا کہ اس سے پاکستانی کرکٹروں کو فائدہ ہوگا۔

واضح رہے کہ مصباح الحق پاکستان سپر لیگ میں اسلام آْباد کی ٹیم کی قیادت کریں گے۔

مصباح الحق سے پوچھا گیا کہ پاکستان سپر لیگ کھیلنے کا مطلب یہ ہے کہ آپ ابھی بھی ٹی 20 کے بہترین بیٹسمین ہیں تو پھر انٹرنیشنل ٹی 20 سے کیوں ریٹائر ہوئے؟

جس پر ان کا جواب تھا کہ یہ سوال اس وقت کی سلیکشن کمیٹی مینیجمنٹ اور بورڈ کے لوگوں سے کیا جائے جس نے ان سے ورلڈ ٹی 20 سے صرف ایک مہینے پہلے ان سے ٹی 20 چھوڑنے کی درخواست کی تھی اور فیصلہ کیا تھا کہ وہ نوجوان ٹیم بنانا چاہتے ہیں۔

سپاٹ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کو معاف کرنے کے حوالے سے مصباح الحق نے کہا کہ کسی کھلاڑی کا کسی ان کے ساتھ ذاتی مسئلہ نہیں ہے ، ہر کسی نے انھیں معاف کر دیا ہے لیکن اس کے باوجود اس واقعے کا اثر ایک بہت بڑا سوالیہ نشان ہے۔

اس سوال کہ بطور کپتان اس مسئلے کا کیسے سامنا کریں گے مصباح الحق نے کہا کہ جو بھی کپتان ہو گا اس کے مشکل تو ہو گی۔ ’سوال ہوں گے اور آپ کو ان کا سامنا کرنا پڑے گا۔تماشائیوں کا بھی ردعمل ہوسکتا ہے۔‘

اسی بارے میں