تیسرے میچ میں ٹیم تبدیل کی جائے گی: آفریدی

تصویر کے کاپی رائٹ PCB
Image caption شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ دوسرے میچ میں پاکستانی بولنگ اچھی نہیں رہی

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان فیصلہ کن ٹی 20 انٹرنیشنل جمعے کو ویلنگٹن کے ویسٹ پیک سٹیڈیم میں کھیلا جائے گا۔

تین میچوں کی یہ سیریز اس وقت ایک ایک سے برابر ہے۔

’درحقیقت یہ آفریدی کا دن تھا‘

عامر کی واپسی، پاکستان بھی جیت گیا

پاکستان کو دس وکٹوں سے شکست

پاکستان نے آکلینڈ میں پہلا میچ 16 رنز سے جیتا تھا لیکن نیوزی لینڈ نے ہملٹن کے دوسرے میچ میں کین ولیمسن اور مارٹن گپٹل کی ورلڈ ریکارڈ شراکت کے نتیجے میں دس وکٹوں سے کامیابی حاصل کر لی تھی۔

پاکستانی ٹیم کے کپتان شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ یہ انتہائی اہم میچ ہے اور وہ چاہیں گے کہ اس میچ سے ایک اچھا کمبینیشن سامنے آ سکے کیونکہ اس کے بعد پاکستانی ٹیم نے ایشیا کپ اور پھر آئی سی سی ورلڈ ٹی 20 میں حصہ لینا ہے۔

شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ دوسرے میچ میں پاکستانی بولنگ اچھی نہیں رہی۔ عمرگل اور محمد عامر چونکہ کافی عرصے کے بعد ٹیم میں واپس آئے ہیں لہذا وہ دونوں گیم پلان کے مطابق بولنگ نہ کر سکے۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر پاکستانی بولر پلاننگ کے مطابق بولنگ کرتے تو یہ میچ جیتا جا سکتا تھا لیکن جس طرح کی بولنگ کی گئی اگر پاکستان نے دو سو رنز بھی بنائے ہوئے ہوتے تب بھی نیوزی لینڈ کی ٹیم میچ جیت جاتی۔

شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ تیسرے میچ میں ٹیم میں یقیناً رد و بدل ہوگا اور کمبینیشن تبدیل کر کے دیکھا جائے گا۔

خیال ہے کہ آؤٹ آف فارم صہیب مقصود اور عمرگل کی جگہ محمد رضوان اور انور علی کو موقع دیا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PCB
Image caption شاہد آفریدی کا کہنا ہے کہ تیسرے میچ میں ٹیم میں یقیناً رد وبدل ہوگا

صہیب مقصود پہلے میچ میں صفر اور دوسرے میچ میں صرف 18 رنز بنا سکے تھے۔

پاکستان کے نقطہ نظر سے اوپنر احمد شہزاد کی فارم بھی تشویش کا سبب بنی ہوئی ہے جو دونوں میچوں میں صرف 16 اور نو رنز بنانے میں کامیاب ہو سکے ہیں۔

پاکستان کے لیے ایک اچھی خبر یہ کہ فاسٹ بولر وہاب ریاض فٹ ہوچکے ہیں۔ نیٹ پریکٹس کے دوران ان کے بازو پر گیند لگی تھی۔

شاہد آفریدی کا کہنا ہےکہ چونکہ وہ نیوزی لینڈ میں اپنا آخری ٹی 20 انٹرنیشنل کھیلیں گے لہٰذا وہ اسے یادگار بنانے کی ہرممکن کوشش کریں گے۔

پاکستانی ٹیم ویسٹ پیک سٹیڈیم میں پہلی بار ٹی 20 انٹرنیشنل کھیلے گی تاہم اس میدان میں اس کی ون ڈے کی کارکردگی مایوس کن رہی ہے اور وہ چار میں سے صرف ایک ون ڈے جیتنے میں کامیاب ہو سکی ہے۔

اسی بارے میں