روس کی اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے سابق سربراہ کی موت

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کامائیو نے دو ماہ قبل اپنے عہدے سے استعفی دیا تھا

روسی ایجنسی تاس کے مطابق روس کی اینٹی دوپنگ ایجنسی ( روساڈا) کے سابق ایگزیکٹو ڈائرکٹر نیکیتا کمائیف کا انتقال ہو گیا ہے۔

ان کی موت روساڈا سے مستعفی ہونے کے دو ماہ بعد ہوئی ہے۔

خیال رہے کہ انھوں نے ڈوپنگ معاملے میں بین الاقوامی مقابلوں سے روس کی معطلی کے بعد اپنے عہدے سے استعفی دیا تھا۔

تاس نے روساڈا کے سابق ڈائریکٹر جنرل رامل خبریو کے حوالے سے بتایا کہ ’ان کی موت بظاہر دل کا دورہ پڑنے سے ہوئی ہے۔‘

تاس کے بقول رامل خبریو نے کہا: ’سکیئنگ کے ایک سیشن کے بعد انھوں نے دل میں درد کی شکایت کی۔ اس سے قبل انھوں نے کبھی دل کے مسئلے کے بارے میں شکایت نہیں کی تھی۔ کم از کم مجھ سے تو نہیں کی تھی۔ ہو سکتا ہے کہ ان کی اہلیہ کو اس کے بارے میں کچھ معلوم ہو۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption واڈا نے گذشتہ سال نومبر میں روس پر پابندیاں عائد کی تھیں

روس کو گذشتہ نومبر میں بین الاقوامی ایتھلیٹکس مقابلوں سے معطل کر دیا گيا تھا۔

ڈوپنگ کے ‏خلاف عالمی ایجنسی ’واڈا‘ نے روسی ایتھلیٹکس پر الزام لگایا تھا وہاں سرکاری طور پر ڈوپنگ ہو رہی تھی۔

ایک جامع رپورٹ میں ان پر بدعنوانی اور جبراً پیسے وصولنے کے الزامات لگائے گئے تھے۔

اس سے قبل روس پر اولمپکس سمیت بین تمام الاقوامی ایتھلیٹکس مقابلوں میں شرکت کرنے پر پابندی لگا دی گئی تھی اور بین الاقوامی ایتھلیٹکس تنظیم آئی اے اے ایف نے واڈا کی رپورٹ کے بعد یہ فیصلہ کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption واڈا کی رپورٹ میں کہا گیا تھا روس سرکاری طور پر ڈوپنگ میں ملوث ہے

ارجنٹائن، یوکرین، بولیویا، انڈورا اور اسرائیل کے ساتھ روس نے بھی واڈا کے قواعد کی خلاف ورزی کی تھی۔

اس کے علاوہ روساڈا کو واڈا کے متعلق ڈوپنگ مخالف کسی بھی سرگرمی سے علیحدہ رہنے کے لیے کہا گيا تھا۔

جب روس نے اگست میں برازیل کے شہر ریو میں ہونے والے اولمپکس میں شرکت کے لیے پابندیاں ہٹائے جانے کی سمت میں کوششیں شروع کی تو مسٹر کمائیف نے روساڈا سے دوسرے تمام بڑے عہدے داروں کے ساتھ استعفی دے دیا تھا۔

اسی بارے میں