کیسے کرکٹ میچ ہیکرز کی جنگ بن گیا؟

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption اس تصویر میں بنگلہ دیش کے سٹار بولر تسکین احمد کو بھارتی کپتان مہندر سنگھ دھونی کے کٹے سر کے ساتھ دکھایا گيا ہے

کرکٹ کے مداحوں میں حریفانہ جنون جنوبی ایشیائی کرکٹ کی روایت کا حصہ ہے۔ لیکن بنگلہ دیش اور بھارت کے درمیان ایک میچ مداحوں کے جنون کی انتہا تھا جس کا اختتام بنگلہ دیشی حکومت کی کئی ویب سائٹس کے ہیک کیے جانے پر ہوا۔

یہ جھگڑا گذشتہ ہفتے بھارت اور بنگلہ دیش کے درمیان ایشیا کپ ٹی 20 کے فائنل میچ سے شروع ہوا تھا۔ بھارت کا اپنے پڑوسی چھوٹے ملک بنگلہ دیش کو ہرانے کا زیادہ امکان تھا لیکن حالیہ دنوں بنگلہ دیش کی ٹیم بہتر کھیل کا مظاہرہ کر رہی تھی اور نتیجے کو پلٹنے کی امید رکھتی تھی۔

جیت کی اسی امید میں بنگلہ دیشی مداحوں نے بھارت کا مذاق اڑانے کے لیے ایک کارٹون پیش کیا جس میں ان کے سٹار بولر تسکین احمد نے بھارتی کپتان مہندر سنگھ دھونی کا کٹا سر اٹھا رکھا تھا۔

یہ تصویر سوشل میڈیا پر تیزی کے ساتھ پھیل گئی اور اسے بعض لوگوں نے جنگی بگل کے طور پر دیکھا تو بعض لوگوں نے اس کی مذمت کی۔

آخر میں بھارت نے میچ آٹھ وکٹوں سے جیت کر چھٹی بار ایشیا کپ پر قبضہ حاصل کیا۔ لیکن بھارتی مداح کسی بھی طرح میچ سے قبل پوسٹ کی جانے والی بنگلہ دیشی تصویر کو معاف کرنے کے لیے تیار نہیں تھے۔

انھوں نے اس تصویر کی نقل میں ایک تصویر پوسٹ کی جس میں بنگلہ دیش کی خالی ٹرافی کی الماری کی تصویر پوسٹ کی۔

Image caption کیرالہ واریئرز نے یہ پوسٹ ڈالی تھی

کرکٹ رقابت کی تاریخ میں یہ واقع آیا گیا ہو جاتا لیکن بعض بھارتی مداحوں کے لیے بے عزت کرنے کی کوششیں ہی کافی نہیں تھیں۔

میچ کے بعد خود کو کرالہ سائبر واریئرز کہنے والے ہیکرز کے ایک گروپ نے ایک درجن سے زیادہ بنگلہ دیشی ویب سائٹ کو ہیک کر لیا جس میں چند حکومتی ویب سائٹیں بھی تھیں۔

جو شخص ان ویب سائٹ پر جاتا وہاں بھارتی جیت کے نغمے پاتا اور طرح طرح کے پیغامات کہ تمہاری کرکٹ ٹیم کچھ نہیں ہے۔

ہیکروں نے اپنی شناخت تو ظاہر نہیں کی تاہم بی بی سی کو بتایا کہ انھوں نے کیوں سائٹوں کو ہیک کیا۔

ای میل کے ذریعے انھوں کہا: ’انھوں (بنگلہ دیشیوں) نے اس کی ابتدا کی اور ہم نے اسے انجام تک پہنچا دیا۔وہ دھونی کی تصویر کو فوٹوشاپ کرنے میں حد سے گزر گئے۔ یہ وائرل ہو گیا اور ہمیں بہت برا لگا۔ ان کے رویے نے ہمیں یہ کرنے پر مجبور کیا۔‘

’ہم جانتے ہیں کہ کسی سائٹ کی شکل مسخ کرنا جرم ہے لیکن یہ بدلہ ہے۔ بنگلہ دیشی ہیکروں نے کرکٹ کے نام پر ایسا کیا ہے تو کیا ہم بھارتی ہیکرز ایسا نہیں کر سکتے؟‘

ایسا پہلی بار نہیں ہوا ہے۔ بھارت کے بڑے روایتی حریف پاکستان کی سائٹ بھی ان لوگوں نے ہیک کی تھی۔

اسی بارے میں