مکی آرتھر پاکستانی کرکٹ ٹیم کے نئے ہیڈ کوچ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مکی آرتھر 2005 سے 2010 تک جنوبی افریقی کرکٹ ٹیم کے کوچ رہے تھے

جنوبی افریقہ کے مکی آرتھر کو پاکستانی کرکٹ ٹیم کا نیا ہیڈ کوچ مقرر کر دیا گیا ہے۔ان کی تقرری دو سال کے لیے عمل میں آئی ہے۔

وہ وقاریونس کی جگہ یہ ذمہ داری سنبھالیں گے جنھوں نے ورلڈ ٹوئنٹی کے بعد اپنے عہدے سے استعفی دے دیا تھا۔

مکی آرتھر پاکستانی کرکٹ ٹیم کے پانچویں غیرملکی کوچ ہوں گے۔ان سے پہلے رچرڈ پائی بس، باب وولمر، جیف لاسن اور ڈیو واٹمور کوچ رہ چکے ہیں۔

مکی آرتھر کا اس وقت کیربیئن لیگ کے ساتھ معاہدہ ہے۔ وہ پاکستان سپر لیگ کھیلنے والی کراچی کنگز کے کوچ بھی ہیں۔

وہ 2005 سے 2010 تک جنوبی افریقی کرکٹ ٹیم کے کوچ رہے تھے۔

2011 ء میں وہ آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کے کوچ بنے تاہم دو سال بعد انھیں ان کے عہدے سے برطرف کر دیا گیا تھا۔

سینتالیس سالہ مکی آرتھر کو ان کے تجربے کی بنیاد پر انگلینڈ کے اینڈی مولز پر ترجیح دی گئی ہے جو نیوزی لینڈ کے سوا دیگر تمام چھوٹی ٹیموں کے کوچ رہے ہیں جن میں ہانگ کانگ، کینیا، سکاٹ لینڈ اور افغانستان شامل ہیں۔

مکی آرتھر اور اینڈی مولز فیصلہ کن مرحلے میں پاکستان کرکٹ بورڈ سے رابطے میں تھے۔

آسٹریلیا کے ڈین جونز بھی کوچ کے امیدوار کے طور پر سامنے آئے تھے لیکن پاکستان کرکٹ بورڈ کے بورڈ آف گورنرز کے ایک رکن کی طرف سے ان کی مخالفت سامنے آئی تاہم پاکستان کرکٹ بورڈ نے بدھ کے روز ڈین جونز سے بھی رابطہ کیا تھا۔

یاد رہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے منگل کے روز یہ کہا تھا کہ اس نے کوچ کے نام کو حتمی شکل دے دی ہے اور اس کا اعلان اگلے دو روز میں کیا جائے گا جس کے اگلے روز اس نے آسٹریلیا کے سٹورٹ لا سے رابطہ کیا تھا لیکن سٹورٹ لا نے کوچ کے بجائے کنسلٹنٹ بننے میں دلچسپی ظاہر کی۔

سٹورٹ لا جولائی میں سری لنکا کے دورے میں آسٹریلوی ٹیم کے بیٹنگ کوچ کی ذمہ داری بھی نبھانے والے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وقاریونس نے ورلڈ ٹوئنٹی میں ٹیم کی بری کارکردگی کے بعد ہیڈکوچ کے عہدے سے استعفی دے دیا تھا

اس سے قبل پاکستان کرکٹ بورڈ نے دو بار انگلینڈ کے برطرف ہونے والے کوچ پیٹر مورس سے بھی رابطہ کیا تھا لیکن مورس نے ناٹنگھم شائر سے وابستگی کو ترجیح دی۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کو کوچ کے عہدے کے لیے دو پاکستانی اور متعدد غیرملکی کوچز کی جانب سے درخواستیں موصول ہوئی تھیں۔ لیکن اطلاعات کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ نے شروع ہی سے یہ ذہن بنالیا تھا کہ نیا کوچ غیرملکی ہوگا۔ یہ اسی کا نتیجہ ہے کہ سابق ٹیسٹ کرکٹر عاقب جاوید نے کوچ کے عہدے کے لیے درخواست دینے سے انکار کردیا تھا حالانکہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے ان سے بھی رابطہ کر کے ان کی دستیابی معلوم کی تھی۔

اسی بارے میں