جیمز اینڈرسن کی پاکستان سیریز میں شرکت مشکوک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption انگلینڈ کی ٹیم کا جیمز اینڈرسن کی بولنگ میں انحصار ہے

انگلینڈ کے فاسٹ بولر جیمز اینڈرسن کی کندھے میں تکلیف کی وجہ سےپاکستان کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ میں شرکت مشکوک ہو گئی ہے۔

انگلینڈ کی ٹیم کا جیمز اینڈرسن پر بہت انحصار ہے کیونکہ انگلش پیچز پر وہ انتہائی خطرناک بولر سمجھے جاتے ہیں۔

چار میچوں پر مبنی پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان ٹیسٹ سیریز کا آغاز 14 جولائی سے لارڈز کے گروانڈ میں ہوگا۔

آئی سی سی بولنگ رینکنگ میں پہلی پوزیشن پر براجمان 33 سالہ اینڈرسن اپنی کاونٹی لنکاشائر کی بھی اگلے دو میچوں میں نمائندگی نہیں کر سکیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اینڈرسن نے سری لنکا کے خلاف حالیہ سیریز میں 21 وکٹیں حاصل کی ہیں

اینڈرسن کا کندھا سری لنکا اور انگینڈ کے مابین حال ہی میں کھیلے جانے والی ٹیسٹ سیریز کے دوران زخمی ہوگیا تھا۔

انگینڈ یہ سیریز دو صفر سے جیتنے میں کامیاب رہا تھا اور اینڈرسن نے انگلینڈ کی فتح میں کلیدی کردار ادا کیا تھا۔

انگلش کرکٹ ٹیم کی جانب سے ٹیسٹ میچوں میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کرنے والے اینڈرسن نے سری لنکا کے خلاف حالیہ سیریز میں 21 وکٹیں حاصل کی ہیں۔

اینڈرسن کی جانب سے سری لنکا کے خلاف عمدہ کارکردگی ان کی آئی سی سی بولنگ رینکنگ میں پہلی پوزیشن پر پہنچنے کی وجہ بنی۔ جیمز اینڈرسن سے قبل انگلینڈ کے سٹیورٹ براڈ آئی سی سی بولنگ رینکنگ میں پہلے نمبر پر تھے۔

خیال رہے کہ یہ تین سال سے زائد عرصے میں پاکستانی ٹیم کی پہلی ٹیسٹ سیریز ہے جو وہ ایشیا سے باہر کھیلے گی۔

2013 میں پاکستانی ٹیم جنوبی افریقہ میں کھیلی گئی ٹیسٹ سیریز تین صفر سے ہاری تھی جبکہ زمبابوے کے خلاف دو ٹیسٹ میچوں کی سیریز ایک ایک سے برابر رہی تھی۔ اس کے بعد سے پاکستانی ٹیم نے متحدہ عرب امارات میں پانچ ٹیسٹ سیریز کھیلی ہیں اور سری لنکا کے دو اور بنگلہ دیش کا ایک دورہ کیا ہے۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ انگلش کنڈیشنز میں جیمز اینڈرسن اور سٹیورٹ براڈ کی بولنگ کا سامنا کرنا پاکستانی بیٹسمینوں کے لیے چیلنج ہوگا۔

پاکستانی ٹیم میں شامل بیٹسمینوں میں صرف محمد حفیظ۔ یونس خان اور اظہرعلی کو انگلینڈ میں ٹیسٹ میچز کھیلنے کا تجربہ ہے۔

اسی بارے میں