’سوری، پاکستان میں ٹیلنٹ نہیں ہے ‘

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان شاہد آفریدی کا کہنا ہے پاکستان کرکٹ بورڈ میں بہت کچھ ٹھیک ہو سکتا ہے لیکن اگر وہ کچھ کہیں گے تو اگلی صبح انھیں نوٹس مل جائے گا۔

بی بی سی اردو کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں شاہد آفریدی سے جب یہ پوچھا گیا کہ بورڈ کرکٹ کے انفراسٹرکچر کو بہتر بنانے کے لیے کیا کر رہا ہے اور کون سی چیزیں ٹھیک ہونی چاہییں تو شاہد آفریدی کا کہنا تھا: ’اس وقت ان کے پاس سینٹرل کنٹریکٹ ہے، لہٰذا اگر وہ کچھ کہیں گے تو انھیں نوٹس مل جائے گا اس لیے وہ مناسب وقت پر بات کریں گے لیکن ابھی بہت کچھ ٹھیک ہونا ہے۔‘

* ’دم باقی ہے، ریٹائرمنٹ کا ارادہ نہیں‘

* لیونل میسی شاہد آفریدی سے ’سبق‘ لیں

* ’مجھے دور رکھیں اور دیکھیں نوجوان کہاں کھڑے ہیں؟‘

محمد عامر کے سپاٹ فکسنگ سکینڈل میں سزا کے بعد پہلی بار لارڈز کرکٹ گراؤنڈ میں کھیلنے کے بارے میں سوال کا جواب دیتے ہوئے شاید آفریدی کا کہنا تھا: ’میرے خیال میں یہ گوروں کا پرانا طریقہ ہے کہ وہ کسی بھی ایسے کھلاڑی جن سے ان کو تھوڑی پرابلم ہوتی ہے کہ وہ ٹف ٹائم دے گا، تو یہاں کا میڈیا اس کھلاڑی کو دباؤ میں لانے کی کوشش کرتا ہے۔‘

انھوں نے کہا: ’میں سمجھتا ہوں کہ محمد عامر کم عمری میں کافی میچیور ہیں اور ذہنی طور پر مضبوط لڑکے ہیں اور مجھے امید ہے کہ ان سے جو امیدیں ہیں وہ ان پر پورا اتریں گے۔‘

اپنی ریٹائرمنٹ کے بارے میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا: ’میں کبھی بھی اپنے آپ کو ٹیم کے اوپر بوجھ رکھ کر کھیلا ہی نہیں ہوں۔ مجھے اللہ تعالی نے بڑی عزت سے کھلایا ہے، عزت ہی سے کھیلوں گا اور عزت ہی سے کرکٹ چھوڑوں گا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ پہلے ان کا ارادہ یہ تھا کہ ایک اچھی ٹیم بنا کر ریٹائر ہوں لیکن ایسا نہیں ہو سکا، پھر انھوں نے فیصلہ کیا کہ اگر موجودہ ٹیم کے کھلاڑی کھیل سکتے ہیں تو میں ان سے ابھی بھی بہتر ہوں۔ اسی لیے میں نے کپتانی چھوڑ دی کیونکہ ایک کھلاڑی کی حیثیت سے میں ان سے بہت بہتر ہوں۔

ایک سوال کہ اگر انھیں پاکستان کی کرکٹ ٹیم میں منتخب نہ بھی کیا گیا تو آپ کو پروا نہیں ہے تو انھوں نے کہا ’مجھے کوئی ایشو نہیں ہے۔‘

ٹیم سلیکشن میں میرٹ کو کتنی اہمیت دی جاتی ہے؟ اس بارے میں شاہد آفریدی کا کہنا تھا: ’جس طریقے کا ٹیلنٹ اس وقت سامنے آ رہا ہے اور جس کے حوالے سے ہم بہت باتیں کرتے ہیں کہ پاکستان میں بڑا ٹیلنٹ ہے، سوری نو ٹیلنٹ۔ پاکستان میں ابھی وہ ٹیلنٹ نہیں ہے جس لیول کی کرکٹ کی ڈیمانڈ ہے کھلاڑیوں کی۔‘

خواتین کرکٹ ٹیم کو بہتر بنانے کے لیے کیا اقدامات کیے جا سکتے ہیں؟ اس پر شاہد آفریدی نے مسکراتے ہوئے کہا: ’پہلے مردوں کی ٹیم کو تو ٹھیک کر لیں۔‘

انھوں نے کہا کہ اگر مردوں کے لیے سہولیات نہیں تو خود سوچیں کہ بیچاری خواتین کرکٹر کن حالات میں کھیل رہی ہوں گی۔

اسی بارے میں